دل کی صحت کو بہتر بنانے سمیت روزانہ چہل قدمی کے زبردست فائدے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
5 منٹس read

ٹائمز آف انڈیا کے مطابق چہل قدمی بہت سے صحت کے فوائد پیش کرتی ہے۔ یہ دل کی صحت کو بہتر بناتی ہے۔ وزن کے انتظام میں مدد کرتی ہے۔ پٹھوں اور جوڑوں کو مضبوط کرتی ہے اور دماغی صحت اور مدافعتی نظام کو بہتر بناتی ہے۔ تقریباً تمام ماہرین صحت ہر وقت پیدل چلنے کے فوائد کے بارے میں بات کرتے ہیں۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ صرف کم از کم 20 منٹ تک چلنے کے بہت امید افزا فوائد ہیں۔ لہذا روزانہ اس ورزش کی مشق کرنی چایے۔ اگر کوئی شخص جم نہیں جا سکتا یا باقاعدگی سے ورزش نہیں کر سکتا تو چہل قدمی ورزش کی دیگر اقسام کے برعکس نتائج حاصل کرتی ہے۔ پیدل چلنے کے لیے کوئی خاص آلات، رکنیت یا تربیت کی ضرورت نہیں ہوتی ہے۔ ہر عمر اور فٹنس کی سطح کے لوگ چہل قدمی کو اپنے روزمرہ کے معمولات میں آسانی سے شامل کر سکتے ہیں۔ چہل قدمی کے کچھ فوائد پر نظر دوڑاتے ہیں۔

1. قلبی صحت

باقاعدگی سے چلنے سے قلبی صحت میں نمایاں بہتری آتی ہے۔ ایک ایروبک ورزش کے طور پر چلنا دل کی دھڑکن کو بڑھاتا ہے۔ خون کی بہتر گردش کو فروغ دیتا ہے اور دل کی کارکردگی کو بڑھاتا ہے۔ پیدل چلنا بلڈ پریشر کو کم کرنے میں بھی مدد کرتا ہے اور اچھے کولیسٹرول کی سطح کو بڑھا کر اور خراب کولیسٹرول کو کم کرکے کولیسٹرول کی سطح کو بہتر بناتا ہے۔ دل کی بیماری، فالج اور دیگر امراض قلب کے خطرے کو کم کرتا ہے۔

2. وزن کم کرنا

چہل قدمی جسمانی وزن کو کنٹرول کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہے کیونکہ اس سے کیلوریز برن ہوتی ہیں ۔ کتنی کیلوریز جلتی ہیں ان کی تعداد چلنے کی رفتار، فاصلے اور جسانی وزن جیسے مختلف عوامل پر منحصر ہے۔ باقاعدگی سے چلنے سے جسم کی چربی کو کم کرنے اور پٹھوں کی طاقت کو بہتر بنانے میں بھی مدد مل سکتی ہے۔ اس سے خاص طور پر ٹانگوں، رانوں اور پیٹ کے پٹھے مضبوط ہوتے ہیں۔

3. ہڈیوں کی صحت

چہل قدمی پٹھوں، ہڈیوں اور جوڑوں کو مضبوط کرتی ہے کیونکہ یہ ٹانگوں، کولہوں اور دھڑ کے پٹھوں کو متحرک کرتی ہے جس سے پٹھوں کی برداشت اور طاقت میں اضافہ ہوتا ہے۔ یہ ہڈیوں کی کثافت کو برقرار رکھنے میں بھی مدد کرتی ہے اور بوڑھوں میں آسٹیوپوروسس اور فریکچر کے خطرے کو کم کردیتی ہے۔

4. ذہنی صحت میں اضافہ

چلنے کے دماغی صحت پر بھی فوائد مرتب ہوتے ہیں۔ باقاعدگی سے جسمانی سرگرمی اینڈورفنز کے اخراج کو متحرک کرتی ہے۔ یہ پیدل چلنا جسم کے قدرتی موڈ کو بڑھاتا ہے اور ڈپریشن اور اضطراب کی علامات کو کم کر سکتا ہے۔ چہل قدمی خاص طور پر قدرتی ماحول میں موڈ کو بہتر بنا سکتی ہے۔

5. علمی صلاحیت میں مضبوطی

علمی سطح پر چہل قدمی دماغی افعال اور یادداشت کو بڑھاتی ہے۔ جسمانی سرگرمی دماغ میں خون کی روانی کو بڑھاتی ہے اور یہ سرگرمی نئے نیوران کی نشوونما کو فروغ دیتی ہے۔ اس سے دماغ کے مجموعی کام میں بہتری آتی ہے۔ سٹڈیز سے پتہ چلتا ہے کہ باقاعدگی سے چلنے سے علمی زوال کو روکنے اور الزائمر اور ڈیمنشیا جیسی بیماریوں کے خطرے کو کم کرنے میں مدد مل سکتی ہے۔

6. عمل انہضام کی بہتری

چہل قدمی پیٹ میں پٹھوں کو متحرک کرکے اور ہاضمے کے راستے کھانے کی نقل و حرکت کو فروغ دے کر ہاضمے میں مدد کرتی ہے۔ چہل قدمی نظام ہاضمہ کی کارکردگی کو بڑھا سکتی ہے۔ یہ اپھارہ کم کر سکتی ہے اور قبض کو روک سکتی ہے۔ یہ خون میں شکر کی سطح کو کنٹرول کرنے میں بھی مدد کرتی ہے۔

7. مدافعتی نظام کو مضبوط بنانا

باقاعدگی سے چہل قدمی مدافعتی نظام کو مضبوط بناتی ہے۔ چہل قدمی سے مدافعتی خلیات پورے جسم میں زیادہ مؤثر طریقے سے حرکت کر سکتے ہیں۔ بہتر گردش مدافعتی نظام کو زیادہ مؤثر طریقے سے انفیکشن کا پتہ لگانے اور ان سے لڑنے میں مدد کرتی ہے۔

8. بزرگوں کی صحت میں بہتری

چہل قدمی صحت کے مسائل کے بغیر لمبی زندگی میں حصہ ڈال سکتی ہے۔ باقاعدہ جسمانی سرگرمی مختلف وجوہات سے موت کی کم شرح سے منسلک ہے۔ اس سے دل کی بیماری، کینسر اور سانس کی بیماری کم ہوتی ہے اور زندگی بھی طویل ہوتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں