.

بھارت: جوہری پلانٹ سکیورٹی افسر نے تین اہلکار مار دیے

وجے سنگھ گرفتار، تفتیش شروع کر دی گئی ہے، ترجمان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

بھارتی پیرا ملٹری فورس کے افسر نے بغیر کسی جائز وجہ کے اپنے تین ساتھیوں کو گولی مار کر ہلاک کر دیا ہے۔ یہ سب لوگ بھارت کے جنوبی علاقے میں قائم ایک جوہری پلانٹ کی حفاظت پر مامور تھے۔

سرکاری حکام کے مطابق ابھی واضح نہیں ہے کہ ایک حساس جگہ پر اس نوعیت کا واقعہ پیش آنے کی وجہ کیا بنی ہے۔ سرکاری طور پر بتایا گیا ہے کہ تامل ناڈو کے علاقے میں یہ ہلاکتیں سنٹرل انڈسٹریل سکیورٹی فورس کے ایک بیس پر پیش آئی ہیں۔

اس سکیورٹی بیس کی اہم ترین ذمہ داری دس کلومیٹر کے فاصلے پر قائم "کالپکام پاور پلانٹ" اور دیگر سرکاری تنصیبات کی حفاظت کے لیے افرادی قوت مہیا کرنا ہے۔

سرکاری طور پر ملنے والی اطلاعات کے مطابق '' سکیورٹی اہلکار صبح کے وقت اپنی ڈیوٹی کے لیے جمع ہوئے تھے کہ ان پر فائر کھول دیا گیا ۔

سنٹرل انڈسٹریل سکیورٹی فورس کے ترجمان ہمندرا سنگھ کا کہنا ہے کہ "اس ناخوشگوار واقعے کی کھوج کی جارہی ہے، جبکہ واقعے کے ذمہ دار کو حراست میں لے کر پولیس کے حوالے کر دیا گیا ہے۔"

ترجمان کے مطابق "وجے پرتاپ سنگھ نامی افسر ایک تجربہ کار افسر ہے وہ اس واقعے کے بعد سخت صدمے میں ہے، ایسا نہیں کہ وہ کوئی نیا افسر تھا کیونکہ اس ملازمت کو چوبیس سال ہو رہے ہیں۔"

ترجمان نے کہا "وجے سے تفتیش ہو رہی ہے، تفتیش کے بعد ہی معاملہ واضح ہو گا کہ واقعہ کس طرح پیش آیا۔" ترجمان نے واضح کیا کہ "جوہری توانائی کے پلانٹ کو فائرنگ سے کوئی نقصان نہیں پہنچا ہے۔"

بھارت کا یہ وہی پاور پلانٹ ہے جس پر 2004 میں سونامی کی بے رحم لہروں کے حملے کی وجہ سے چھ ہزار سے زائد ہلاکتیں ہوئی تھیں۔ تاہم محافظ کے ہاتھوں ہلاکتوں کا یہ پہلا واقعہ ہے۔ اس واقعے سے سکیورٹی بیس پر سراسیمگی کا ماحول ہے۔