ایران 'داعش' سے بڑا خطرہ ہے: اسرائیلی وزیر دفاع

تہران پرلبنان اور وادی گولان محاذ گرم کرنے کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی وزیردفاع موشے یعلون نے کہا ہے کہ ان کے ملک کو دولت اسلامیہ عراق وشام "داعش" سے زیادہ ایران سے خطرہ ہے۔ انہوں نے الزام عاید کیا کہ ایران شام کے وادی گولان اور لبنان کے محاذوں کو اسرائیل کے خلاف گرم کرنے اور سرحدی کشیدگی پیدا کرنے کی کوششیں کررہا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اسرائیلی وزیر دفاع نے ایران اور مغرب کے درمیان طے پائے سمجھوتے پر اپنے اسی رٹے رٹائے موقف کا اعادہ کیا اور کہا کہ تل ابیب کو تہران اور مغرب کے درمیان معاہدے پر اس لیے اعتراض ہے کیونکہ ایران کو طویل اور درمیانی مدت تک بھاری رقوم کےحصول کا نیا موقع مل گیا اور اب ایران کو ملنے والی رقوم دہشت گردی کی معاونت کے لیے استعمال ہوں گی۔ ایران مسئلے کا حل نہیں بلکہ مسئلے کا حصہ ہے۔

موشے یعلون کا کہنا تھا کہ تہران کے متنازع جوہری پروگرام پر معاہدے کے باوجود ایران میں امریکا اور اسرائیل کے حوالے سے سوچ میں مثبت تبدیلی نہیں آئی ہے۔ ایرانی اب بھی امریکا کو "شیطان بزرگ" ہی قرار دیتے ہیں۔ یوں اس معاہدے سے ایرانیوں میں شدت پسندی کے توڑ میں کوئی مدد نہیں کی۔

انہوں نے الزام عاید کیا کہ ایران شام کےوادی گولان اور لبنان کےمحاذوں کو گرم کررہا ہے۔ کبھی جہاد مغنیہ اور کبھی سمیر القنطارکے ذریعے اسرائیل کے خلاف سازشیں کی جا رہیں لیکن ایران کی ان سازشوں سے با خبر ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے شام اور لبنان کے ساتھ واضح سرخ لکیر کھینچ دی ہے۔ ہم کسی کو وادی گولان سے اسلحہ کی اسمگلنگ اور حزب اللہ کو کیمیائی ہتھیاروں تک رسائل کا راستہ مہیا نہیں کرنے دیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں