عرب لیگ کے وزرائے خارجہ کا دہشت گردی کو شکست دینے کا عزم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

عرب لیگ کے وزرائے خارجہ نے دہشت گردی کو شکست دینے کے عزم کا اظہار کیا ہے۔

موریتانیہ کے دارالحکومت نواکشوط میں عرب لیگ کے سربراہ سے قبل وزرائے خارجہ کا اجلاس ہوا ہے جس میں اسرائیلی ،فلسطینی تنازعے کے پائیدار حل کی ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔اجلاس میں سربراہ کانفرنس کے ایجنڈے کا جائزہ لیا گیا۔

مصری وزیر خارجہ سامح شکری نے اجلاس کے آغاز میں کہا کہ ''ہمیں دہشت گردی کو شکست دینا ہوگی ۔یہ ایک ترجیح ہے''۔ان کے موریتانوی ہم منصب اسلكو ولد أحمد ازيد بيه نے عرب ریاستوں کو اس مقصد کے حصول کے لیے افریقی ممالک سے قریبی روابط رکھنے کی ضرورت پر زوردیا۔

عرب وزرائے خارجہ نے عرب دنیا اور خاص طور پر شام ،لیبیا اور یمن میں جاری تنازعات کے حل میں معاون اقدامات کی حمایت سے اتفاق کیا۔انھوں نے اسرائیل اور فلسطینیوں کے درمیان تعطل کا شکار امن مذاکرات کی بحالی کے لیے فرانسیسی اور مصری اقدام کا خیرمقدم کیا ہے۔

عرب لیگ کا دو روزہ سربراہ اجلاس سوموار سے شروع ہورہا ہے اور اس میں سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور مصری صدر عبدالفتاح السیسی کی شرکت بھی متوقع ہے۔

اس اجلاس میں سوڈانی صدر عمر حسن البشیر کی شرکت بھی متوقع ہے۔وہ ہیگ میں قائم عالمی فوجداری عدالت (آئی سی سی) کو دارفور میں جنگی جرائم،انسانیت مخالف جرائم اور نسل کشی میں ملوّث ہونے کے الزامات میں مطلوب ہیں۔تاہم موریتانیہ نے آئی سی سی کے قیام سے متعلق روم معاہدے پر دستخط نہیں کیے ہیں،اس لیے وہ سوڈانی صدر کو گرفتار اور انھیں آئی سی سی کے حوالے کرنے کا پابندی نہیں ہے۔

عمر حسن البشیر اپنے خلاف آئی سی سی کے وارنٹ گرفتاری کے اجراء کے باوجود متعدد ممالک کے دورے کرچکے ہیں۔ان میں آئی سی سی کی توثیق کرنے والے ممالک بھی شامل ہیں۔انھوں نے گذشتہ سال جوہانسبرگ میں افریقی یونین کے سربراہ اجلاس میں شرکت کی تھی لیکن انھیں جنوبی افریقا کی حکومت نے گرفتار نہیں کیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں