کینیڈا سے سعودی طلبہ کی 18 ممالک میں منتقلی کے لیے منصوبہ زیر ِعمل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

کینیڈا میں زیر تعلیم سعودی طلبہ کو اٹھارہ مختلف ممالک میں منتقل کیا جارہا ہے،وہ وہاں اپنی تعلیم جاری رکھ سکیں گے اور اس عمل میں ان کی تعلیم کا کوئی حرج نہیں ہوگا۔

یہ بات سعودی عرب کے نائب وزیر برائے تعلیمی وظائف اور کمرشل اتاشیوں کے نگرانِ اعلیٰ ڈاکٹر جاسر الحربش نے العربیہ سے منگل کے روز گفتگو کرتے ہوئے بتائی ہے۔انھوں نے کہا کہ ’’ ہم دوسرے ممالک میں ثقافتی مشنوں سے رابطے کررہے ہیں تاکہ کینیڈا سے سعودی طلبہ کو ان ممالک میں جلد سے جلد منتقل کیا جاسکے۔ایسے ترجیحی ممالک میں آئیرلینڈ ، آسٹریلیا ، نیوزی لینڈ ، جنوبی کوریا ، جاپان اور سنگاپور شامل ہیں۔ان کے یہاں ذریعہ تعلیم انگلش ہے ،ہم ایسے ممالک میں سعودی طلبہ کو نہیں بھیجنا چاہتے ہیں جہاں ذریعہ تعلیم انگریزی نہ ہو تاکہ کسی غیر مانوس زبان میں نصاب اور ذریعہ تعلیم ان کی تعلیمی سرگرمیوں میں حائل نہ ہو ‘‘۔

انھوں نے کہا کہ سعودی عرب اپنے کسی بھی طالب علم کو کسی قسم کا نقصان نہیں پہنچانا چاہتا ہے اور وزارت تعلیم ان طلبہ کی کینیڈا سے دوسرے ممالک میں منتقلی کے لیے دی گئی ڈیڈ لائن میں رد وبدل بھی کرے گی اور انھیں ہر طرح کی سہولت مہیا کرے گی۔

ڈاکٹر جاسر الر بش نے بتایا کہ ’’اس وقت کینیڈا میں 12 ہزار سے زیادہ سعودی طلبہ زیر تعلیم ہیں۔ ان میں سات ہزار وظائف کے مختلف پروگراموں کے تحت تعلیم پارہے ہیں ۔ان میں سے بعض کے ساتھ ان کے بیوی، بچے بھی رہ رہے ہیں۔پانچ ہزار سعودی طلبہ بیچلر ڈگری کے حصول کے لیے زیر تعلیم ہیں اور دوہزار کے لگ بھگ پوسٹ گریجوایٹ یا طب کے شعبے میں مختلف تخصص کے لیے تعلیم پا رہے ہیں‘‘۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ سعودی حکام کینیڈا سے اپنے تمام طلبہ کو ان ممالک میں منتقل کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں جہاں ہمارے ثقافتی مشن موجود ہیں ۔ ان میں امریکا ، برطانیہ ، نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا نمایاں ہیں۔ان ممالک کے سعودی عرب کے ساتھ اچھے تعلقات استوار ہیں اور ان کے یہاں تعلیمی اداروں میں اعلیٰ معیار کی تعلیم دی جاتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں