.

تیونس : دہشت گردی کا الزام ، "النہضہ" پارٹی کی تحلیل کے لیے مقدمہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

تیونس میں اپوزیشن کی دو شخصیات شكری بلعید اور محمد البراہیمی کے دفاع کی کمیٹی کے رکن علی کلثوم کا کہنا ہے کہ وہ دہشت گردی کے الزام کے تحت سیاسی جماعت النہضہ موومنٹ کے خلاف مقدمہ دائر کریں گے۔

دوسری جانب تیونس کے صدر الباجی قائد السبسی نے جمعرات کے روز یہ بتا چکے ہیں کہ النہضہ موومنٹ نے انہیں ذاتی طور پر دھمکایا ہے۔ انہوں نے باور کرایا کہ عدالت النہضہ کے خفیہ ادارے کے حوالے سے تفصیلات سامنے لائے گی۔

قومی سلامتی کونسل کے اجلاس کے دوران صدر السبسی کا کہنا تھا کہ وہ النہضہ موومنٹ کو اپنی من مانی کرنے کے لیے نہیں چھوڑیں گے۔ تیونس کے صدر نے واضح کیا کہ وہ کسی بھی فریق کے حق میں یا اس کے خلاف کسی طور بھی جانب داری کا مظاہرہ نہیں کریں گے۔ السبسی کے مطابق بلعید اور البراہیمی کے دفاع کی کمیٹی کے پاس النہضہ کو قصور وار ٹھہرانے کے لیے ثبوت "معقول ہیں اور ان سے چشم پوشی نہیں کی جا سکتی"۔ انہوں نے کہا کہ النہضہ کا خفیہ ادارہ اب پوری دنیا کے سامنے آ چکا ہے اور وہ خفیہ نہیں رہا۔