.

الجزائر: 82 سالہ علیل عبدالعزیز بوتفلیقہ پانچویں مدتِ صدارت کے لیے امیدوار ہوں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

الجزائر کے وزیراعظم نے اعلان کیا ہے کہ 82 سالہ صدر عبدالعزیز بوتفلیقہ اس سال ہونے والے صدارتی انتخابات میں پانچویں مدت کے لیے امیدوار ہوں گے۔وہ آیندہ چند روز میں الجزائری عوام کے نام ایک خط کے ذریعے امیدوار ہونے کا اعلان کریں گے۔

وزیراعظم احمد او یحییٰ نے ہفتے کے روز ایک نیوز کانفرنس میں اپنے اس ’’ مضبوط یقین‘‘ کا اظہار کیا ہے کہ ’’صدر بوتفلیقہ 18 اپریل کو ہونے والے صدارتی انتخابات میں امیدوار کے طور پر حصہ لیں گے اور تمام اشارے بھی اسی بات کی غمازی کرتے ہیں‘‘۔

او یحییٰ نے کہا کہ ’’ان کے خیال میں بوتفلیقہ اپنی خرابیِ صحت کے باوجود بہترین امیدوار ہیں‘‘۔الجزائری صدر دل کا دورہ پڑنے کے بعد سے جزوی طور پر معذور ہوچکے ہیں اور وہ بہت کم عوام میں نظر آتے ہیں۔

اب تک دو اور امیدواروں سابق وزیراعظم علی بن فلیس اور ریٹائرڈ جنرل علی غدیری نے بھی صدارتی انتخابات میں حصہ لینے کا اعلان کیا ہے۔

بوتفلیقہ گذشتہ قریباً بیس سال سے الجزائر کے حکمراں چلے آرہے ہیں اور وہ اب بھی عوام میں مقبول ہیں۔وہ پہلی مرتبہ 1999ء میں الجزائر کے صدر منتخب ہوئے تھے۔2004ء میں دوسری مرتبہ اور 2009ء میں تیسری مرتبہ 71 فی صد ووٹ لے کرصدر منتخب ہوئے تھے۔وہ 2014ء میں چوتھی مرتبہ 81.53 فی صد ووٹ لے کر صدر منتخب ہوئے تھے۔ان کے قریب ترین حریف علی بن فلیس رہے تھے۔ان کے حق میں صرف 12.18 فی صد ووٹ ڈالے گئے تھے۔

الجزائری صدر عارضہ قلب میں مبتلا ہیں ۔ وہ 2013ء میں مسلسل تین ماہ تک پیرس میں زیر علاج رہے تھے۔ تب وطن واپسی کے بعد بھی سے کم کم ہی نظر آئے ہیں۔گذشتہ صدارتی انتخابات میں ان کی مہم بھی ان کے حامیوں نے چلائی تھی۔

گذشتہ صدارتی انتخابات میں حزب اختلاف نے پولنگ کے دوران فراڈ اور بے ضابطگیوں کے الزامات عاید کیے تھے اور شکست خوردہ علی بن فلیس نے انتخابی نتائج کو چیلنج کرنے کا اعلان کیا تھا۔ان صدارتی انتخابات میں ووٹ ڈالنے کی شرح صرف 51.3 فی صد رہی تھی ۔تب حکومت نے موقف اختیار کیا تھا کہ انتخابی عمل آزادانہ اور شفاف انداز میں مکمل ہوا تھا۔