امریکی صدر کی مصروفیات کا شیڈول لیک ہونے پروائٹ ہائوس برہم

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی روزانہ کی مصروفیات پر مشتمل شیڈول لیک ہونے پر حکومت نے سخت برہمی کا اظہار کیا ہے۔ امریکی صدر کی خاتون مشیرہ میڈلین سٹرہوٹ نے صدر کے شیڈول کے لیک کیے جانے کو 'بداعتمادی کا ناجائز استعمال' قراردیا ہے۔

مائیکرو بلاگنگ ویب سائٹ 'ٹویٹر' پر ایک ٹویٹ میں انہوں‌ نے لکھا کہ صدر روزانہ سیکڑوں ایسی ملاقاتیں اور رابطے کرتے ہیں جو ان کے شیڈول میں درج نہیں ہوتے۔ صدر ٹرمپ موجودہ تاریخ کے دیگر صدور سے کہیں زیادہ محنت اور مشقت کرتے اور قوم کی خدمت بجا لاتے ہیں۔

خیال رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے روزانہ کے شیڈول کی تفصیلات حال ہی میں سامنے آئی ہیں۔ اس شیڈول سے ظاہر ہوتا ہے کہ صدر کا ایک بڑا وقت غیر علانیہ سرگرمیوں میں صرف ہوتا ہے جبکہ ان کی ٹیم کا کہنا ہے کہ صدر بہت مشقت کے ساتھ کام کرتے ہیں۔

لیک ہونے والے شیڈول کی تفصیلات 'ایکسپریس' ویب سائٹ پر شائع کی گئی ہیں جس میں بتایا گیا ہے کہ دن کے پہلے پانچ گھنٹے صدر ٹرمپ انتظامی نوعیت کے امور نمٹاتے ہیں تاہم اس کی مزید تفصیلات کا پتا نہیں چلا۔

سوموار کے روز صدر کی مصروفیات کا شیڈول ہفتے کے دیگر ایام کی طرح ہے جس کی وضاحت دو سطروں میں کی گئی ہے۔
مثلا 11:45 پر صدر ٹرمپ انٹیلی جنس رپورٹ سنیں گے اور 12:45 پر کھانا کھائیں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں