.

ہسپانیہ : زندگی سے بھرپور "الیکانتے" بُھوتوں کے شہر کا منظر پیش کرنے لگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ہسپانیہ کے شہر الیکانتے میں سڑکوں پر وحشت ناک ویرانی نے ڈیرہ ڈال رکھا ہے۔ اگرچہ شہر میں ریستورانوں اور دکانوں کی بھرمار ہے تاہم ان دنوں کرونا وائرس کے اندیشے کے سبب یہ آدمیوں سے مکمل طور پر خالی ہونے کے نتیجے میں بُھوتوں کے شہر کا منظر پیش کر رہا ہے۔

ایک وڈیو میں شہر کے مناظر دکھائے گئے ہیں جو لوگوں سے خالی دکھائی دے رہا ہے۔ مزید یہ کہ دکانوں اور ریستورانوں نے بھی اپنے دروازے بند کر رکھے ہیں۔

واضح رہے کہ الیکانتے شہر ہسپانیہ کے مشرق میں واقع ہے۔ یہ بحیرہ روم میں ایک تاریخی بندرگاہ بھی ہے۔ الیکانتے اپنے ریتیلے ساحلوں، رنگا رنگ میلوں اور زندگی سے بھرپور راتوں کے سبب مشہور ہے۔ یہ یورپ اور ہسپانیہ کے لوگوں کے لیے تعطیلات گزارنے کا ایک مرکزی مقام شمار ہوتا ہے۔

یاد رہے کہ ہسپانیہ میں حکام نے اتوار کے روز کرونا وائرس کے تقریبا ایک ہزار نئے کیسوں کا اعلان کیا۔ اس کے علاوہ 24 گھنٹوں میں 100 کے قریب متاثرہ افراد موت کے منہ میں چلے گئے۔ واضح رہے کہ یورپ میں اطالیہ کے بعد کرونا وائرس سے سب سے زیادہ متاثر ہونے والا ملک ہسپانیہ ہے۔

ہسپانیہ میں اس مہلک وبا کو روکنے کی کوشش میں قریبا مکمل قرنطینہ عائد کر دیا گیا ہے۔ اب تک کرونا کے مجموعی طور پر 7753 کیس سامنے آ چکے ہیں جب کہ 288 افراد اپنی زندگیوں سے ہاتھ دھو چکے ہیں۔

ہفتے کی شام ہسپانیہ کے وزیراعظم پیڈرو سانچیز نے4.6 کروڑ نفوس کی آبادی پر مشتمل ملک میں قریبا مکمل قرنطینہ عائد کرنے کا اعلان کر دیا تھا۔ اس کے نتیجے میں لوگوں کو صرف کام کے لیے یا انتہائی ضرورت کے واسطے گھروں سے نکلنے کی اجازت ہے۔ ان ضرورتوں میں کھانے پینے کی اشیاء اور دواؤں کی خریداری کے علاوہ علاج معالجہ اہم ترین ہے۔

ملک بھر میں غیر بنیادی ضروریات کی دکانیں ، تجارتی مراکز، اسکول، عجائب خانے اور اسپورٹس کلبز بند ہو گئے ہیں۔ اس کے علاوہ اشبیلیہ اور اندلس سمیت ملک کے کئی بڑے شہروں میں آئندہ ماہ اپریل میں مذہبی تہوار کے موقع پر نکالی جانے والی ریلیاں منسوخ کر دی گئی ہیں۔