.

ترک وزراء کا دورۂ لیبیا، طرابلس حکومت کے عہدے داروں سے ملاقات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ترکی کے وزیر خارجہ اور وزیر خزانہ سمیت اعلیٰ عہدے داروں پر مشتمل ایک سرکاری وفد بدھ کو لیبیا کے دارالحکومت طرابلس میں پہنچا ہے جہاں وہ قومی اتحاد کی حکومت ( جی این اے) کے اعلیٰ عہدے داروں سے ملاقات کرنے والا تھا۔

جی این اے نے اپنے فیس بُک صفحے پر ترک وفد کی آمد کی اطلاع دی ہے۔برطانوی خبررساں ایجنسی رائیٹرزنے ایک ترک ذریعے کے حوالے سے اطلاع دی ہے کہ وفد لیبیا کے دو فوجی اڈوں کو استعمال کرنے سے متعلق بات چیت کے لیے آیا ہے۔

لیبیا میں 2011ء میں سابق مطلق العنان صدر کرنل معمر قذافی کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے خانہ جنگی جاری ہے۔ ملک میں اس وقت دو متوازی حکومت قائم ہیں جن کے تحت فوجیں باہم گتھم گتھا ہے اور لیبیا کے مشرقی شہر بنغازی سے تعلق رکھنے والے جنرل خلیفہ حفتر کے زیر قیادت لیبی قومی فوج ( ایل این اے) نے دارالحکومت طرابلس کا قبضے کےلیے گذشتہ کئی ماہ سے محاصرہ کررکھا ہے۔

لیبیا کی بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ حکومت کے تحت فوج طرابلس کا دفاع کررہی ہے۔ اس کو ترکی کی عسکری اور سیاسی حمایت حاصل ہے۔ترکی اسلحہ کے علاوہ شامی جنگجوؤں کو طرابلس کے دفاع کے لیے بھیج رہا ہے۔

فرانس نے سوموار کو ایک بیان میں کہا تھا کہ وہ اپنے اتحادیوں سے ترکی کے لیبیا میں بڑھتے ہوئے ''جارحانہ '' اور ''ناقابل قبول'' کردار پر تبادلہ خیال کرنا چاہتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں