.

مائیک پومپیو کا اماراتی عہدے داروں سے لیبیا بحران اورایران کے معاملے پر تبادلہ خیال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے ابوظبی میں بدھ کے روز متحدہ عرب امارات کے اعلیٰ عہدے داروں سے ملاقات کی ہے اور ان سے لیبیا میں جاری بحران اور ایران کی تخریبی سرگرمیوں کا توڑ کرنے کے بارے میں حکمت عملی پر تبادلہ خیال کیا ہے۔

مائیک پومپیو نے یو اے ای کے وزیر برائے خارجہ امور اور بین الاقوامی تعاون شیخ عبداللہ بن زاید آل نہیان اور قومی سلامتی کے مشیر طحنون بن زاید آل نہيان سے بات چیت کی ہے۔

امریکی محکمہ خارجہ کے ایک بیان کے مطابق ’’انھوں نے لیبیا میں جاری بحران کے خاتمے اور وہاں پائیدار جنگ بندی ، خلیج کے اتحاد اور خطے میں ایران کے تخریبی اثرورسوخ سے نمٹنے سمیت باہمی دلچسپی کے مختلف علاقائی اور عالمی امور پر تبادلہ خیال کیا ہے۔‘‘

معاہدۂ ابراہیم

امریکی وزیر خارجہ نے ملاقات میں یو اے ای کے عہدے داروں کو اسرائیل کے ساتھ معاہدۂ ابراہیم کے نام سے طے پانے والے تاریخی سمجھوتے پر مبارک باد دی ہے اور اس کو ملک کی تاریخی کامیابی قرار دیا ہے۔

مائیک پومپیو مشرقِ اوسط کے دورے کے آخری مرحلے میں آج ہی اماراتی دارالحکومت ابو ظبی پہنچے تھے۔وہ امریکا کی ثالثی میں 13 اگست کو اسرائیل اور یو اے ای کے درمیان امن معاہدے کے اعلان کے بعد خطے کا یہ پہلا دورہ کررہے ہیں۔

انھوں نے منگل کے روز ابو ظبی کے ولی عہد شیخ محمد بن زاید آل نہیان سے ٹیلی فون پر متحدہ عرب امارات اور اسرائیل کے درمیان اعلان شدہ امن معاہدے کے بارے میں تبادلہ خیال کیا تھا۔

یو اے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق ’’انھوں نے اس معاہدے کو اس انداز میں مضبوط بنانے کے امکانات کے حوالے سے تبادلہ خیال کیا تھا کہ جس سے خطے میں امن واستحکام کی اساس فراہم ہوسکے۔‘‘