.

سعودی عرب، یمن اور افریقی ملکوں کی خاطر کووڈ۔19 ویکسین کے لیے مذاکرات کر رہا ہے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی وزیر خزانہ محمد الجدعان نے کہا ہے کہ سعودی عرب کم آمدنی والے ملکوں جیسے یمن اور افریقی ممالک کو کرونا ویکسین کی فراہمی کے لیے ویکسین تیار کرنے والے اداروں سے مذاکرات کر رہا ہے۔

ان خیالات کا اظہار انھوں نے منگل کو ڈیوس میں ورلڈ اکنامک فورم کے آن لائن اجلاس سے خظاب کرتے ہوئے کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ یمن اور بعض افریقی ممالک ’کوفیکس پروگرام‘ کے ذریعے مطلوبہ تعداد میں کورونا ویکسین حاصل نہیں کر سکتے۔ انہوں نے کہا کہ کرونا ویکسین کی خریداری اور تقسیم کے لیے عالمی برادری کوفیکس کے نام سے خصوصی طریقہ کار مقرر کیے ہوئے ہے۔

وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ہم کئی کمپنیوں سے بات چیت کر رہے ہیں تاکہ خاص طور پر کم آمدنی والے ملکوں کو زیادہ سے زیادہ ویکسین فراہم کی جا سکے۔ انہوں نے کہا کہ مثال کے طور پر یمن اور افریقی ممالک میں سے کچھ کو فیکس پروگرام کے ذریعے مطلوبہ تعداد میں ویکسین حاصل نہیں کر سکیں گے۔

خیال رہے کہ سعودی عرب نے 2020 کے دوران جی 20 کے قائد کی حیثیت سے یہ امید دلائی تھی کہ غریب ملکوں کو کرونا وائرس ویکسین مہیا ہو اور اس سلسلے میں مالدار ممالک اپنا کردار ادا کریں۔ سعودی عرب کرونا وائرس کے علاج، ویکسین کے لیے ریسرچ اور تیاری کی مد میں بھاری بجٹ فراہم کیے ہوئے ہے۔