.
عراقی ملیشیا

قآنی ایران نواز حکومت بنانے کے لیے بغداد میں موجود ہیں:ذرائع

تہران نواز ملیشیاؤں کی انتخابی نتائج کے خلاف سڑکوں پرآنے کی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایک مغربی سفارت کار نے خبر رساں ادارے’ رائیٹرز‘ کو بتایا کہ ایرانی سپاہ پاسداران انقلاب کی سمندر پار عسکری کارروائیوں کی ذمہ دار ’القدس فورس‘ کے کمانڈر اسماعیل قآنی بغداد میں ہیں تاکہ عراقی انتخابات کے ابتدائی نتائج کے اعلان پر عمل کیا جا سکے۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ جنرل قآنی اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ عراق میں ایوان نواز حکومت تشکیل پائے۔

مغربی سفارت کار نے رائیٹرز کو تصدیق کی کہ قآنی ایران نواز ملیشیاؤں سے ملاقات کرکے تہران کے اتحادیوں کو اقتدار میں رکھنے کا راستہ تلاش کر رہے ہیں۔

دو ایرانی ذرائع نے رائیٹرز کوتصدیق کی کہ قانی اس وقت بغداد میں ہیں۔

ایران کی وفادارملیشیا کے کمانڈرنے رائیٹرز کو بتایا کہ مسلح گروہ اگرضروری ہوا تو تشدد کا سہارا لینے کے لیے تیارہیں تاکہ اس بات کو یقینی بنایا جا سکے کہ وہ اپنا اثر و رسوخ نہ کھو دیں۔ انہوں نے مزید کہا کہ ایران نواز ملیشیائیں سڑکوں پر آنے یا عمارتوں کو نذرآتش کرنے کے منصوبے پربھی غور کررہی ہیں۔

وزیراعظم مصطفیٰ الکاظمی نے انتخابات کے دوران سیکیورٹی پلان کی کامیابی کی تصدیق کی تھی اورکہا تھا کہ انتخابی عمل کے دوران تمام ضروری احتیاطی تدابیر اختیارکی گئی تھیں۔

ایران نواز الفتح الائنس کے سربراہ ہادی العامری عراق میں ہونے والے انتخابات کے نتائج کو مسترد کردیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ موجودہ نتائج کسی قیمت پر قبول نہیں یہ جعلی الیکشن اور پہلے سے طے شدہ پروگرام کا حصہ ہیں۔

سابق وزیر اعظم حیدر العبادی نے نتائج کے خلاف اپیل کا اعلان اور ووٹروں سے چھیڑ چھاڑ کو روکنے کے لیے تمام اقدامات کرنے کا عزم ظاہر کیا۔

عراق کے الیکشن کمیشن نے بعض انتخابی حلقوں میں ہونے والی پولنگ پر مخالف گروپوں کی طرف سے کی گئی اپیلیں وصول کرنا شروع کردی ہیں۔ بعض پولنگ اسٹیشنوں کے نتائج کی گنتی ابھی باقی ہے۔

کردستان ڈیموکریٹک پارٹی نے سڑکوں پر آنے کی دھمکی پر خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ انتخابات شفاف ہوئے ہیں۔ اگر کوئی گروپ انتخابی نتائج مسترد کر کے سڑکوں پرآتا ہے یہ عراق میں تباہ کن نتائج کا باعث بنے گا۔

یورپی مبصر مشن کے سربراہ نے کہا ہےکہ عراقی انتخابات منظم رہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ عراقی انتخابات کے دوران اظہار رائے کی آزادی کا احترام کیا گیا۔

عراقی نیوز ایجنسی کے مطابق ملک میں ہونے والے پارلیمانی انتخابات کے موقعے پر59 سفارت کاروں اور 100 بین الاقوامی مبصرین کے مشن نے نگرانی کی ہے۔