مشرقی بحیرہ چین میں ماسکو اور بیجنگ کی مشترکہ بحری مشقیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

روس اور چین نے مشرقی بحیرہ چین میں بحری مشقیں مکمل کر لی ہیں۔ ایک ہفتے کی مشترکہ مشقوں کے بعد جس میں دشمن کی آبدوز کو ڈیپتھ چارجز کے ساتھ پکڑنے اور جنگی جہاز پر توپ خانے سے فائر کرنے کی مشق شامل تھی میں ہزاروں نیوی اہلکاروں نے حصہ لیا۔

چین کی نئی خبر رساں ایجنسی (شنہوا) نے بتایا کہ یہ مشقیں جو 21 سے 27 دسمبر تک "بحری تعامل 2022" کے نام سے ہوئیں، ان میں بحر الکاہل میں روسی بحری بیڑہ بھی شامل تھا اور یہ مشقیں چین کے صوبہ ژی جیانگ میں زوشان اور تائیژو میں کی گئیں۔

روسی وزارت دفاع نے کہا کہ "بحرالکاہل کے بحری بیڑے اور چین کی پیپلز لبریشن آرمی کی بحریہ کے جنگی جہازوں نے دو طرفہ بحری مشقوں کے فریم ورک کے اندر عملی کام مکمل کر لیا ہے"۔

انہوں نے مزید کہا "دونوں ممالک کے بحری جہازوں نے اینٹی سب میرین ایوی ایشن کی مدد سے ایک سمجھے جانے والے دشمن کی آبدوز کی تلاش میں حصہ لیا اور گہرائی میں بموں کا ایک بیراج استعمال کیا۔

وزارت دفاع نے ایک ویڈیو کلپ شائع کیا جس میں مشرقی بحیرہ چین میں روسی اور چینی جنگی جہازوں کے ایک گروپ کو دکھایا گیا تھا، جس کے دوران روسی ملاح اپنے چینی ہم منصبوں سے مینڈارن میں بات کرتے تھے، اور روسی جہاز میزائل فائر کرتے نظر آئے تھے۔

تاس نیوز ایجنسی نے اطلاع دی ہے کہ چینی صدر شی جن پنگ سال کے اختتام سے قبل صدر ولادیمیر پوتین سے بات کریں گے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں