نائن الیون کے متاثرین افغان مرکزی بینک کی رقم کے حقدار نہیں ہیں:امریکی عدالت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

نیویارک کے ایک وفاقی جج نے منگل کو فیصلہ سنایا کہ 11 ستمبر 2001 کے دہشت گرد حملوں کے متاثرین کے لواحقین افغانستان کے مرکزی بینک کے 3.5 بلین ڈالر کے فنڈز کے حقدار نہیں ہیں۔

نیویارک کے فیڈرل ریزرو بینک میں رکھے گئے اثاثے 15 اگست 2021 کو منجمد کر دیے گئے تھے۔ جب طالبان کابل میں داخل ہوئے اور امریکی حمایت یافتہ افغان حکومت کا تختہ الٹ دیا۔

امریکی صدر جو بائیڈن نے ایک بیان میں کہا تھا کہ یہ رقم نائن الیون کے متاثرین کے خاندانوں کو فراہم کی جا سکتی ہے۔

متاثرہ خاندانوں کے ایک گروپ نے چند سال قبل نقصان کے ازالے لیے طالبان پر مقدمہ دائر کیا تھا اور جیت گئے تھے - اس کے بعد سے وہ افغان فنڈز کی ضبطی اور فیصلے کے تحت رقم کی ادائیگی کا مطالبہ کر رہے تھے۔

تاہم نیویارک کے جنوبی ضلع کے جج جارج ڈینیئلز نے منگل کو کہا کہ افغانستان کے مرکزی بینک کی رقوم ضبط کرنا وفاقی عدالتوں کے دائرہ اختیار میں نہیں ہے۔

ڈینیئلز نے 30 صفحات پر مشتمل ایک فیصلے میں وضاحت کی کہ "مدعیان طے شدہ فیصلے کے تحت اور تاریخ کے بدترین دہشت گردانہ حملے کے نقصان کے لیے ازالے کے حقدار ہیں، لیکن وہ افغانستان کے مرکزی بینک کے فنڈز سے ایسا نہیں کر سکتے۔" .

انہوں نے کہا کہ "طالبان ، نہ کہ سابق اسلامی جمہوریہ افغانستان یا افغان عوام ، کو گیارہ ستمبر کے حملوں میں طالبان کی ذمہ داری کا جرمانہ ادا کرنا چاہئے۔"

جج نے کہا کہ وہ فنڈز کی ضبطی میں آئینی طور پر رکاوٹ ہیں۔ کیونکہ اس کا مطلب طالبان کو افغانستان کی جائز حکومت کے طور پر تسلیم کرنا ہوگا۔

2021 میں قبضے کے بعد سے، امریکہ سمیت کسی بھی ملک نے طالبان کو افغانستان کی آئینی حکومت تسلیم نہیں کیا۔

یہ فیصلہ گیارہ ستمبر کے متاثرین کے خاندانوں کے ساتھ ساتھ ان انشورنس کمپنیوں کے لیے بھی ایک دھچکا ہے جنہوں نے حملوں کی وجہ سے ادائیگیاں کی تھیں۔

گیارہ ستمبر 2001 کو نیویارک کے ٹوئن ٹاورز، واشنگٹن ڈی سی میں پینٹاگون اور پنسلوانیا کے ایک میدان میں ہائی جیک کیے گئے چار طیارے ٹکرا جانے سے 2,900 سے زیادہ افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اس وقت کے صدر جارج ڈبلیو بش نے جوابا افغانستان پر حملہ کیا جس کے نتیجے میں امریکی حمایت یافتہ حکومت اور طالبان کے درمیان دو دہائیوں تک جنگ جاری رہی۔

اگست 2021 میں امریکی اور نیٹو فوجیوں کے انخلا کے ساتھ، طالبان نے دوبارہ اقتدار سنبھالا۔

یہ ملک تقریباً مکمل طور پر امداد پر منحصر تھا، اور معیشت تباہی کے دہانے پر آپہنچی جب امریکہ نے 7 بلین ڈالر افغان اثاثے منجمد کر دیے تھے۔ بائیڈن نے فروری 2022 میں رقم تقسیم کرنے کے ایک منصوبے کا انکشاف کیا، جس کے تحت نصف افغانستان کو امداد کے طور پر اور نصف گیارہ ستمبر حملوں کے متاثرین کے خاندانوں کے لیے دینے کی تجویز دی گئی تھی۔

تاہم یہ ابھی تک واضح نہیں ہے کہ اپیلیں ناکام ہونے کی صورت میں ان خاندانوں کے لیے مختص کیے گئے 3.5 بلین ڈالر کی ادائیگی کیسے ممکن ہوگی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں