ہتھیلی کے سائز کے جڑواں بچوں کا گنیز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں اندراج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکا میں غیرمعمولی حد تک کم حجم اور سائز کے ساتھ پیدا ہونے والے جڑواں بچوں کو ان کے حجم کی وجہ سے گینز بک آف ورلڈ ریکارڈ میں شامل کیا گیا ہے۔ ہلکے ہونے اور پیدائش کی مدت سے کئی ماہ قبل پیدا ہونے کی وجہ سے ڈاکٹروں نے جڑوں بچوں کی پیدائش کو ایک معجزہ قرار دیا تھا۔

امریکی "سی این این" نیٹ ورک نے ایک طویل رپورٹ میں انکشاف کیا کہ والدین، 35 سالہ شکینہ راجیندرم اور 37 سالہ کیون نداراگا کو ڈاکٹروں نے مطلع کیا تھا کہ متوقع جڑواں بچے پیدائش کے بعد زندہ نہیں رہ پائیں گے۔ کیونکہ خاتون نے صرف 21 ہفتے اور 5 دن کے بعد یعنی مقررہ تاریخ سے تقریباً چار ماہ پہلے بچوں کو جنم دیا تھا۔

نیٹ ورک کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ والدین ٹورنٹو کے ماؤنٹ سینائی ہسپتال منتقل ہو گئے۔ یہ اسپتال زچگی کیسز کے لیے مختص ہے۔ ماں نے اپنے حمل کو مزید چند گھنٹے تک برقرار رکھنے کا عزم کر رکھا تھا۔

رپورٹ میں مزید کہا گیا کہ 4 مارچ 2022 کی آدھی رات کے صرف ایک گھنٹہ بعد حمل کے 22ویں ہفتے میں ’اڈیل‘ پیدا ہوئی جس کا وزن 330 گرام سے کم تھا، اس کے 23 منٹ بعد اس کا بھائی ایڈریل دنیا میں آیا تو اس کا وزن 420 گرام سے بھی کم تھا۔

دونوں بچے "ہاتھ کی ہتھیلی" کے سائز کے تھے اور ان کا وزن ایک سوڈا بوتل کے برابر تھا اور ان کے اعضاء ان کی شفاف جلد کی وجہ سے دیکھے جا سکتے تھے۔

ڈاکٹروں نے غذائی اجزاء کے انتظام کے لیے 2 ملی میٹر سے چھوٹی سوئی کا استعمال کیا جوایک باریک سلائی کی سوئی کے سائز کی تھی۔

دونوں نے وقت سے پہلے پیدا ہونے والے سب سے ہلکے جڑواں بچوں کے طور پر گنیز بک آف ریکارڈ میں نام درج کرایا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں