شام میں داعش کے کیمپوں سے 100 خواتین اور بچوں کو واپس تاجکستان بھیج دیا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

وسط ایشیائی ملک تاجکستان کے حکام کے مطابق سینکڑوں تاجک باشندوں کے دہشت گرد تنظیموں میں شامل ہونے کے بعد اتوار کو شام سے تقریباً 100 خواتین اور بچوں کو تاجکستان واپس بھیج دیا گیا۔

تاجک وزارت خارجہ کے ترجمان نے اے ایف پی کو بتایا کہ ہم نے قازق حکام کی درخواست پر اپنے 104 ہم وطنوں کو وطن واپس بھیج دیا ہے ۔ ان افراد میں 31 خواتین اور 73 بچے شامل ہیں۔ اسی طرح قازقستان کے پانچ افراد یعنی ایک ماں اور اس کے چار بچوں کو بھی تاجکستان روانہ کیا گیا ہے۔

بچے اور خواتین شمال مشرقی شام میں کرد فورسز کے زیر انتظام دہشت گرد خاندانوں کے کیمپوں میں تھے اور غیر سرکاری تنظیموں نے ان کے حالات زندگی پر تنقید کی تھی۔ یاد رہے جولائی 2022 میں اسی طرح کے آپریشن میں 146 تاجک خواتین اور بچوں کو واپس کیا گیا تھا۔

2019 میں شدت پسند تنظیم داعش کی "خلافت" کے خاتمے کے بعد سے عالمی برادری کو شام اور عراق میں پکڑے گئے یا مارے گئے دہشت گردوں کے خاندان کے افراد کی واپسی کے مسئلے کا سامنا ہے۔ غیر سرکاری تنظیم "ہیومن رائٹس واچ" کے مطابق 41 ہزار سے زیادہ غیر ملکی شہری جن میں زیادہ تر 12 سال سے کم عمر کے ہیں 2022 میں بھی شمال مشرقی شام کے کیمپوں اور جیلوں میں بند تھے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں