سمندری طوفان 'خانون' جاپان کے مرکزی جزیرے سے ٹکرا گیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سمندری طوفان خانون منگل کو علی الصباح جاپان کے مرکزی جزیرے سے ٹکرا گیا۔ طوفان کے نتیجے میں تیز آندھی کے جھکڑ چلے اور بارشیں ہوئیں جس کی وجہ سے پہلے ہی دریاؤں میں طغیانی آ گئی اور لینڈ سلائیڈنگ کی وارننگ جاری کر دی گئی۔

اگرچہ طوفان کی شدت میں کمی آ گئی ہے لیکن خانون اب بھی گرجتا برستا بحرالکاہل سے اوساکا اور کوبی کے تجارتی مرکزوں کی طرف بڑھ رہا ہے جس میں میں موسلا دھار بارش اور بلند لہروں کے ساتھ 144 کلومیٹر (90 میل) فی گھنٹہ کی رفتار سے چلنے والی آندھی کے جھکڑ شامل ہیں۔

جاپان کی موسمیاتی ایجنسی نے بتایا کہ یہ طوفان ٹوکیو سے تقریباً 600 کلومیٹر (375 میل) مغرب میں واکایاما پریفیکچر میں صبح 5 بجے سے کچھ دیر پہلے ہونشو کے مرکزی جزیرے سے ٹکرایا۔

ایجنسی نے کہا کہ بدھ کی صبح تک کچھ علاقوں میں 24 گھنٹوں میں 35 سینٹی میٹر تک بارش متوقع ہے۔

موسمیاتی ایجنسی نے ٹویٹ کیا۔ "ٹائفون کی رفتار سست ہے اور (وسطی اور مغربی علاقوں) میں اس کے اثرات کا دورانیہ بڑھ سکتا ہے۔ کل بارش (کچھ علاقوں میں) اگست میں ماہانہ اوسط سے زیادہ ہو سکتی ہے۔"

موسمیاتی ایجنسی نے متعدد علاقوں کے لیے جاری کردہ انتباہ میں کہا۔ "براہ کرم تودے گرنے، نشیبی علاقوں میں پانی کی سطح بڑھنے، طغیانی زدہ اور سیلابی دریاؤں اور شدید ہواؤں کے خلاف انتہائی احتیاط برتیں۔"

ایک مقامی یوٹیلیٹی کے مطابق منگل کی صبح تک سات علاقوں میں کم از کم 50,000 خاندان بجلی سے محروم ہو چکے تھے۔

فضا میں اڑ کر نیچے گرتے ہوئے ملبے کی وجہ سے مقامی مسافر ٹرینیں رک گئیں جبکہ پروازیں اور ایکسپریس ٹرینیں طے شدہ طور پر معطل کر دی گئیں۔

جاپان ایئر لائنز نے 240 بالخصوص اوساکا کے مغربی مرکز تک جانے والی پروازیں منسوخ کر دیں۔ اس کی حریف اے این اے کمپنی نے 313 پروازیں منسوخ کیں۔

مقامی حکومتوں نے 180,000 سے زیادہ رہائشیوں کو بالخصوص واکایاما، کیوٹو اور قدیم دارالحکومت نارا میں غیر لازمی انخلاء کی ہدایات جاری کی ہیں۔

موسمیاتی نظام بحیرۂ جاپان میں جا نکلنے سے پہلے منگل کا پورا دن علاقے میں موجود رہے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں