کولمبیا میں حکام نے ہوائی اڈے سے 130 زہریلے مینڈک اسمگل کرنے کی کوشش ناکام بنادی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

ایک دلچسپ اور متنازعہ واقعے میں کولمبیا میں حکام نے 130 زہریلے مینڈک پکڑے کران کی اسمگلنگ ناکام بنا دی۔ یہ مینڈک بوگوٹا ہوائی اڈے کے ذریعے کل سوموار کے روز اسمگل کیے جا رہے تھے۔ انہیں ایک خاتون اسمگل کرنے کی کوشش کر رہی تھی جسے گرفتار کر لیا گیا۔

برازیلی خاتون پانامہ میں ساؤ پاؤلو کے سفر کے دوران فلمی کنٹینرز کے اندر رنگین ہارلیکوئن زہر مینڈک (اوفاگا ہسٹریونیکا) لے جا رہی تھی۔

بوگوٹا کی وزیر ماحولیات ایڈریانا سوٹو نے میڈیا کے ساتھ شیئر کی گئی ایک ویڈیو میں کہا کہ خاتون نے "دعویٰ کیا کہ مقامی کمیونٹی نے اسے یہ مینڈک بہ طور تحفہ دیے تھے‘‘۔

زہریلے مینڈک کیا ہیں؟

ہارلیکوئن مینڈک زہریلے ہوتے ہیں۔ یہ پانچ سینٹی میٹر سے کم لمبے ہوتے ہیں اور ایکواڈور اورکولمبیا کے درمیان بحر الکاہل کے ساحل کے ساتھ ساتھ وسطی اور جنوبی امریکا کے دیگر ممالک میں مرطوب جنگلات میں پائے جاتے ہیں۔

بوگوٹا پولیس کے سربراہ جوآن کارلوس آریالو نے کہا کہ "ان خطرے سے دوچار انواع کی بین الاقوامی منڈیوں میں بہت مانگ ہے۔ نجی طور پر انہیں جمع کرنے والے لوگوں کو اس طرح کے ایک مینڈک کی ایک ہزار ڈالر قیمت ادا کی جاتی ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں