فرانس: عمانویل میکروں کو شکست دینے والی میرین لی پین کون ہیں؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

فرانسیسی صدر عمانویل میکروں کے یورپی انتخابات میں فرانسیسی ووٹوں میں انتہائی دائیں بازو کی اکثریت کے بعد ایوانِ نمائندگان کو تحلیل کرنے کے اعلان پر فوری ردِ عمل میں جیتنے والی رہ نما میرین لی پین نے کہا ہے کہ "اگر فرانسیسی ہمیں اختیار دیں اور ہم پر اعتماد کریں تو ہم اقتدار اپنے ہاتھ میں لینے کے لیے تیار ہیں‘‘۔

اتوار کی شام میکروں نے پارلیمنٹ کی تحلیل اور نئی قانون ساز کونسل کے انتخابات کی تنظیم کا اعلان اس وقت کیا جب فرانسیسی انتہائی دائیں بازو نے یورپی انتخابات میں صدارتی اکثریتی کیمپ پر بڑے فرق سے کامیابی حاصل کی۔

میرین لوپین یورپی الیکشن میں اپنا ووٹ ڈال رہی ہیں
میرین لوپین یورپی الیکشن میں اپنا ووٹ ڈال رہی ہیں

انتہائی دائیں بازو نے 30 فی صد سے زیادہ ووٹوں کے ساتھ انتخابات میں کامیابی حاصل کی، جس سے صدارتی کیمپ کو ایک بڑی شکست ہوئی۔ صدارتی کیمپ نے اندازوں کے مطابق تقریباً 15 فی صد ووٹ حاصل کیے ہیں۔

لی پین اس سے قبل 2017ء اور 2022ء کے صدارتی انتخابات میں میکروں سے دوبار الیکشن ہار گئی تھیں۔ وہ دوبارہ 2027ء میں ہونے والے انتخابات میں دوبارہ صدارت تک پہنچنے کا ارادہ رکھتی ہیں۔

میرین لی پین اپنی پارٹی کے اجلاس کے موقع پر
میرین لی پین اپنی پارٹی کے اجلاس کے موقع پر

تجربہ کار سیاست دان لی پین اپنے تیز مزاج کے لیے جانی جاتی ہیں۔ نیشنل فرنٹ کے بانی اور فرانسیسی سیاست کی جدید تاریخ کے سب سے متنازع چہروں میں سے ایک جین میری لی پین کی سب سے چھوٹی بیٹی ہیں۔

اس نے نیشنل فرنٹ کو "ڈی ڈیمونائز" کرنے کے لیے قدم اٹھایا اور اگست 2015ء میں اس کے بانی باپ کو ملک سے نکال دیا جب اسے یقین ہو گیا کہ اس کا متنازعہ موقف قومی سطح پر کسی بھی فتح کی راہ میں رکاوٹ بنا رہے گا۔

میرین لی پین گزشتہ سال پرتگال کے دورے کے موقع پر۔
میرین لی پین گزشتہ سال پرتگال کے دورے کے موقع پر۔

اس نے پارٹی کی تصویر کو تبدیل کرنے کے لیے بھی کام کیا جس کی وہ 2011 سے قیادت کر رہے تھے۔ ایک طویل راستہ طے کرتے ہوئے اس نے اس کا نام بھی تبدیل کیا اور 2018 میں "قومی ریلی" کی جگہ "نیشنل فرنٹ" نام رکھا گیا۔

میرین نے فرانسیسی میگزین "کلوزر" کے ساتھ ایک انٹرویو میں اپنے والد کے اثرات کے بارے میں بات کی۔ اس نے انکشاف کیا کہ "جوانی کے دوران لوگوں کے لیے اس کے نام کی وجہ سے اس کے ساتھ جذباتی تعلق جوڑنا آسان نہیں تھا"۔ اس نے مزید کہا کہ ’مجھے یاد ہے کہ ایک مرد نے مجھ سے علیحدگی اختیار کرنے کا انتخاب کیا اس لیے کیا کیونکہ اس کے سماجی ماحول کی طرف سے اس پر شدید دباؤ ڈالا گیا تھا"۔

ان کی دو شادیوں سے تین بچے ہیں۔ حالیہ برسوں میں 55 سالہ لی پین نے صحافیوں کے سوالات پر کم جذباتی ردعمل، زیادہ مسکراتے ہوئے اور ہلکے رنگ کے کپڑوں کا انتخاب کرتے ہوئے زیادہ دوستانہ تصویر پیش کرنے کی کوشش کی ہے۔

جہاں تک امیگریشن کے بارے میں اس کے موقف کا تعلق ہے جو کہ یورپی انتہائی دائیں بازو کا سب سے نمایاں مسئلہ ہے، جین جورس فاؤنڈیشن کے ایک مطالعے نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ لی پین اس تناظر میں زیادہ شدت اختیار کریں گی۔

لی پین فرانسیسی آئین میں "قومی ترجیح" کو شامل کرنا چاہتے ہیں، جو غیر ملکیوں کو کئی مراعات سے محروم کر دے گا۔ یہ غیر قانونی تارکین وطن، مجرموں اور غیر ملکی مجرموں کو بھی نکالنا چاہتی ہیں۔ اس کے علاوہ انتہا پسندی کے مشتبہ افراد اور ایک سال سے بے روزگار غیرملکیوں کو بھی نکالنا چاہتی ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں