النصرہ فرنٹ کا گولان کی سرحدی راہداری پر قبضہ

اسرائیل نے بھی شامی فوجی پوزیشنوں پر گولے پھینکے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

شام میں القاعدہ کی النصرہ فرنٹ کے نام سے سرگرم شاخ نے شام اور اسرائیل کے درمیان سرحدی راہداری کا کنٹرول سنبھال لیا ہے۔ یہ سرحدی راہداری گولان ہائیٹس کے علاقے میں ہے۔ شام کی صورت حال کو مانیٹر کرنے والے گروپ نے النصرہ فرنٹ کی اس کامیابی کی خبر دی ہے۔

اس سے پہلے النصرہ فرنٹ کے عسکریت پسندوں نے سرحد کے شامی علاقے میں زیر قبضہ لی گئی القنیطرۃ کی چوکی پر قبضے کے عزم کا اظہار کیا تھا۔ اطلاعات کے مطابق یہ قبضہ شامی رجیم کے ساتھ تصادم کے بعد کیا گیا ہے۔ خیال رہے شام کے لیے قائم آبزر ویٹری پورے شام کی صورت حال کور کرتی ہے۔

شام اور اسرائیل کے درمیان اس سرحدی راہداری کی نگرانی کے لیے اقوام متحدہ کے مبصرین بھی تعینات ہیں جو دو طرفہ آمدو رفت پر نظر رکھتے ہیں۔

اس چوکی پر قبضے کے لیے لڑائی کے دوران اسرائیلی فوج نے بھی شامی فوج کے خلاف توپ خانے کا استعمال کیا ہے۔ اسرائیلی فوج کا موقف ہے کہ اس سے پہلے اس کا ایک فوجی اور ایک عام شہری زخمی ہو گئے تھے۔

دوسری جانب اقوام متحدہ کے ترجمان سٹیفن دجیرک کا کہنا ہے کہ وہ عسکریت پسندوں کے سرحدی چوکی پر قبضے کی تصدیق نہیں کر سکتے کیونکہ ابھی اس کے اطراف میں لڑائی جاری ہے۔ ترجمان کے مطابق شامی افواج اور باغیوں کے درمیان فائرنگ کا تبادلہ جاری ہے، اس دوران اقوام متحدہ کی پوزیشنز کے قریب بھی کئی گولے آکر گرے ہیں۔

جانی نقصان کو روکنے کے لیے اقوام متحدہ کے موقع پر موجود فوجی سربراہ فریقین سے پوری طرح رابطے میں ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں