.

داعش کے استیصال کے لیے تعاون کی ضرورت ہے:بشارالاسد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

شامی صدر بشارالاسد نے کہا ہے کہ سخت گیر جنگجو گروپ دولت اسلامیہ عراق وشام (داعش) کے قلع قمع کے لیے بین الاقوامی تعاون کی ضرورت ہے۔

انھوں نے شام کی حکمراں بعث پارٹی کے دمشق میں ایک اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ ''اس وقت پورا خطہ فیصلہ کن دور سے گزر رہا ہے اور اس کے نتیجے کو متعین کرنے میں حقیقی اور مخلصانہ بین الاقوامی کردار ایک اہم عامل کی حیثیت رکھتا ہے''۔

شام کی سرکاری خبررساں ایجنسی سانا کی رپورٹ کے مطابق صدر اسد نے کہا ہے کہ ''داعش کی قیادت میں دہشت گرد گروپ شام پر جنگ مسلط کرنے والوں کی جارحانہ اور غلط پالیسیوں کا نتیجہ ہیں''۔

واضح رہے کہ امریکا کی قیادت میں بعض مغربی اور عرب ممالک عراق اور شام میں داعش کے ٹھکانوں پر اپنے جنگی طیاروں سے فضائی حملے کررہے ہیں لیکن داعش کے خلاف اس جنگ میں امریکی صدر براک اوباما شامی صدر بشارالاسد سے اتحاد کے لیے تیار نہیں ہیں اور ان کا کہنا ہے کہ شامی صدر حکمرانی کا قانونی جواز کھوچکے ہیں۔

صدر اوباما نے گذشتہ اتوار کو آسٹریلیا کے شہر برسبین میں جی 20 سربراہ اجلاس کے موقع پر کہا تھا کہ اگر ہم بشارالاسد کے ساتھ اتحاد قائم کرتے ہیں تو شام سے تعلق رکھنے والے اہل سنت داعش کی حمایت پر کمربستہ ہوجائیں گے اور اس طرح ہمارا اتحاد کمزور ہوگا۔