.

ایران معاہدے کے باوجود امریکا 'شیطان بزرگ' ہے: حزب اللہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لبنانی ملیشیا حزب اللہ کے جنرل سیکرٹری حسن نصر اللہ کا کہنا ہے کہ ایران کے مغربی طاقتوں سے نیوکلیئر معاہدے کے باوجود امریکا 'شیطان بزرگ' رہے گا۔ ہمیں اب بھی تہران سے مدد ملنے کا یقین ہے۔

اس ماہ جنیوا میں طے پانے والے معاہدے کے بعد اپنے پہلے عوامی ردعمل میں حسن نصر اللہ نے یقین ظاہر کیا کہ تہران ان ناقدین کی امیدوں پر پانی پھیر دے گا کہ جو یہ پروپیگنڈہ کرتے نہیں تھکتے کہ ایران معاہدے کے بعد حزب اللہ کی حمایت ترک کر دے گا۔

حسن نصر اللہ نے ان خیالات کا اظہار شہید جنگجووں کے بچوں کے اعزاز میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ ہمیں تہران کی مسلسل حمایت ملنے کا پورا یقین ہے۔

'العربیہ' نیوز چینل سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے امریکا نے ڈپئی نیشنل سیکیورٹی ایڈوائزر بن ہوڈز نے امید ظاہر کی کہ پابندیوں میں نرمی کے بعد حاصل ہونے والی 'اضافی آمدنی' کو تہران اسلامی مملکت کی بیمار معیشت کو سہارا دینے کے لئے استعمال کرے گا۔
تاہم انہوں نے کہا کہ اضافی رقم ممکنہ طور پر تہران کے علاقے میں اتحادیوں کی سرگرمیوں کو بڑھاوا دینے کے لئے استعمال ہو سکتی ہے۔

یاد رہے لبنانی کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ شام میں بشار الاسد کی فوج کو مدد و تعاون فراہم کر رہی ہے۔ چودہ جولائی کو طے پانے والے معاہدے کے علی الرغم امریکی صدر براک اوباما اس رائے کا اظہار کر چکے ہیں کہ ایران کے ساتھ مشرق وسطی میں عدم استحکام کے لئے پراکسی جنگ اور دہشت گردی جیسے معاملات پر ہمارے بہت سے اختلافات برقرار ہیں۔