.

شام: اِدلب میں امریکی حملے مین القاعدہ کے متعدد ارکان ہلاک

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی فوج کی جانب سے شمالی شام میں اِدلب میں القاعدہ تنظیم کے خلاف حملے کی تصدیق کی گئی ہے۔ تاہم اُس نے حلب صوبے میں ایک مسجد کو دانستہ طور پر نشانہ بنانے کی تردید کی ہے جہاں انسانی حقوق کے شامی مانیٹرنگ گروپ کے مطابق کم از کم 42 افراد جاں بحق ہوگئے۔

جمعے کے روز جاری بیان میں امریکی مرکزی کمان کے ترجمان کرنل جان تھامس نے کہا کہ "ہم نے کسی مسجد کو نشانہ بنایا البتہ جس عمارت کو القاعدہ تنظیم کے ارکان کے جمع ہونے کے سبب نشانہ بنایا گیا وہ ایک مسجد سے تقریبا 15 میٹر کے فاصلے پر واقع تھی"۔ کرنل جان کے مطابق کارروائی میں شہریوں کی ہلاکت کے دعوؤں کی تحقیقات کی جا رہی ہے۔

اس سے قبل مرکزی کمان کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا تھا کہ امریکی افواج نے 16 مارچ کو شام کے صوبے اِدلب میں القاعدہ ارکان کے ایک مجموعے کو فضائی حملے کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں کئی دہشت گرد مارے گئے۔

مرکزی کمان کے ترجمان نے واضح کیا کہ اس حملے کا بالکل دُرست ہدف غیر واضح ہے تاہم ممکنہ طور پر حلب کے مغربی نواحی گاؤں الجینہ میں ایک مسجد کو نقصان پہنچا ہوگا۔

شام میں انسانی حقوق کے مانیٹرنگ گروپ نے جمعرات کے روز بتایا تھا کہ الجینہ قصبے میں ایک مسجد پر فضائی حملے کے نتیجے میں 42 افراد جن میں اکثریت شہریوں کی ہے جاں بحق ہو گئے جب کہ درجنوں زخمی بھی ہوئے۔