.

"کھانے کی اشیاء میں زہر ملا دو".. داعش کی کارکنان کو نئی ہدایت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

دنیا بھر میں دہشت اور سفاکیت کی علامت سمجھی جانے والی شدت پسند تنظیم داعش نے چند روز قبل مغربی دنیا بالخصوص یورپ میں پھیلے ہوئے اپنے انفرادی حملہ آوروں کو ایک "گھناؤنی" ترکیب کے ساتھ نئے حملے کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں۔

دہشت گرد تحریکوں اور تنظیموں کے امور پر نظر رکھنے والی معروف ویب سائٹ "SITE" کے مطابق تنظیم نے ٹیلیگرام پر اپنے چینل کے ذریعے اپنے تمام ہمدردوں کو یہ پیغام دیا ہے کہ وہ "بازاروں اور گروسری اسٹورز پر موجود غذائی اشیاء میں زہر ملا دیں"۔

پیغام میں کہا گیا ہے کہ " آپ لوگ جہاں کہیں بھی ہیں وہاں کمزوریوں کے دہانے کھلے ہیں... لہذا اہلِ کفر پر کاری ضرب لگائیے"۔

یاد رہے کہ تنظیم ماضی میں بھی اس سے ملتے جلتے خیالات کا اعلان کر چکی ہے بالخصوص 2015 میں جب نیوز ویک جریدے کے مطابق تنظیم نے "چھرا گھونپو ، جلا دو ، زہر دے دو" کی عبارت کو رائج کیا تھا۔

اگرچہ اس سے پہلے تنظیم نے اس طریقہ کار کا سہارا نہیں لیا تاہم امریکی پولیس نے 2016 میں سان فرانسسکو میں تنظیم کی سپورٹ کے شبہے میں ایک 22 سالہ یمنی نوجوان عامر سنان الحجاجی کو حراست میں لیا تھا۔ الحجاجی نے دسمبر 2016 میں عدالت میں اعتراف کیا تھا کہ اس نے دواؤں میں چوہے مار زہر ملا کر اس نائٹ کلبوں میں تقسیم کرنے کے معاملے پر پیش رفت کی تھی۔

داعش تنظیم نے اپنے نئے پیغام میں مذبح خانوں اور مشہور گروسری اسٹورز پر کام کرنے والوں کو ہدایت دی ہے کہ وہ کھلی ہوئی غذائی اشیاء ، سبزیوں ، پھلوں ، گوشت اور شراب کی بوتلوں میں سائنائیڈ زہر ملا دیں۔

یاد رہے کہ سائنائیڈ تیز ترین مہلک زہر شمار کیا جاتا ہے۔

تنظیم نے اپنے پیغامات میں کہا ہے کہ " آپ لوگ زہر کی اقسام اور ان کی تیاری پر غور کریں جو چند لمحوں میں سیکڑوں لوگوں کو موت کی نیند سلا دے گا"۔