.

حوثی جلادوں کا عقوبت خانوں میں قیدیوں پر وحشیانہ تشدد جاری

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں حوثی دہشت گردوں کی جانب سے گرفتار کیے گئے شہریوں کو عقوبت خانوں میں منظم انداز میں اذیتوں کا سامنا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق یمن میں مغوی شہریوں کے اہل خانہ نے بتایا ہے کہ جبری گم شدہ شہریوں کو عقوبت خانوں میں منظم انداز میں تشدد کا سامنا ہے۔

حراست میں لیے گئے شہریوں کے اہل خانہ کا کہنا ہے کہ حوثی جلاد نہ صرف منظم انداز میں قیدیوں کو تشدد کا نشانہ بنا رہے ہیں بلکہ قیدیوں کو کھانا، پانی اور ادویات بھی مہیا نہیں کی جا رہی ہیں اور ان کے اہل خانہ کو بھی ان سے ملنے سے روکا جا رہا ہے۔

ایک پریس بیان میں مغویوں کے لواحقین نے کہا کہ صنعاء کی ھبرہ جیل میں قید سیکڑوں افراد کو شدید اذیتوں کا سامنا ہے۔

بیان میں کہا جا رہا ہے کہ قید تنہائی میں ڈالے قیدیوں کو رات بھر ٹھنڈے پانی میں رکھا جاتا ہے۔ انہیں حوثی لیڈروں کی تقرریں سننے پرمجبور کیا جاتا ہے اور انہیں حکومت کے خلاف بغاوت کے لیے اپنے ساتھ ملانے کے لیے مختلف حربوں سے بلیک میل کرنے کی کوششیں کی جاتی ہیں۔

اسیران کی ماؤں نے اپنے بیٹوں پرہونے والے تشدد اور وحشیانہ حربوں کے تمام نتائج کی ذمہ داری حوثیوں پرعاید کی ہے اور کہا ہے کہ ان کے بچوں کو کئی نقصان پہنچتا ہے کہ اس کی ذمہ داری حوثیوں پر عاید ہوگی۔