.

اصلاح پسند ایرانی لیڈر نے خامنہ ای کو ہٹلر کے وزیرکی طرح کذاب قرار دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران کے ایک سرکردہ اصلاح پسند رہ نما نے مرشد اعلیٰ آیت اللہ علی خامنہ ای کو جرمن ڈکٹیٹر اڈولف ہٹلر کے وزیر جوزف گوبلز کی طرح ’کذاب‘ شخص قرار دیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ ایرانی سپریم لیڈر ملک کے لیے زہرقاتل ہیں۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اصلاح پسند ایرانی لیڈر ابو الفضل قدیانی ایک بیان میں کہا کہ سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ایک کذاب ہیں۔ ان میں اور جرمن ڈکٹیٹر اڈولف ہٹلر کے وزیر خاص جوز گوبلز میں کوئی فرق نہیں۔

خیال رہے کہ جنرل جوزف گوبلز کو ہٹلر کے ایک مکار وزیر کے طور پر جانا ہے اور کہا جاتا ہے اس نے جتنے بھی جھوٹ بولے،اتنا ہی انہیں حقیقت کے روپ میں پیش کرنے کی کوشش کی گئی۔

انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ سپریم لیڈر آیت اللہ علی خامنہ ای کے دور میں آزادی اظہار رائے اور مذہبی آزادیوں کو سب سے زیادہ پامال کیا گیا۔ سپریم لیڈر یہ دعویٰ کرتے ہیں کہ ملک میں شہریوں کو آزادیاں حاصل ہیں مگر حکومت پر تنقید کرنے والوں کو پابند سلاسل کیا جاتا ہے۔

ابو الفضل قدیانی نے خیالات کا اظہار ایک مضمون میں کیا ہے جسے اصلاح پسندوں کی مقرب ویب سائیٹ ’کلمہ‘ پر شائع کیا گیا۔ انہوں نے سابق وزیراعظم اور سبز انقلاب تحریک کے رہ نما امیر حسین موسوی اور مہدی کروبی کی جبری نظر بندی کی شدید مذمت کی۔

انہوں نے استفسار کیا کہ اگر خامنہ اور ان کی وفادار عدلیہ کا یہ دعویٰ ہے کہ ملک میں عوام پر تشدد نہیں کیا جاتا تو قیدیوں کی وہ طویل فہرست کہاں سے آئی جنہیں محض حکوم کی کارکردگی پر سوال اٹھانے کی پاداش میں جیلوں میں ڈال دیا گیا۔

قدیانی نے سپریم لیڈر کو چیلینج کیا کہ اگر وہ اپنے دعوے میں سچے ہیں کہ وہ عوام کے مقبول رہ نما ہیں توانہیں اس حوالے سے ایک عدد عوامی ریفرنڈم بھی کرانا چاہیے۔ مگر وہ ایسا نہیں کریں گے کیونکہ ایک ظالم لیڈر کبھی عوامی ریفرنڈم نہیں کراتا۔

ایرانی اصلاح پسند رہ نما نے شہریوں پر عرصہ حیات تنگ کرنے، احتجاج کے حق سے روکنے اور ملک میں کرپشن کو عام کرنے جیسے موضوعات پر بھی تفصیلی قلم آزمائی کی اور حکومت کی کرپشن بے نقاب کرتےہوئے کہا کہ ایرانی رجیم کرپشن کا منبع بن چکی ہے۔