سعودی معیشت

شہزادہ محمد بن سلمان نے قومی صنعت کی حکمت عملی کا آغاز کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

سعودی ولی عہد، وزیراعظم اور کونسل برائے اقتصادی امور اور ترقی کے چیئرمین شہزادہ محمد بن سلمان بن عبدالعزیز آل سعود نے صنعت کے لیے قومی حکمت عملی کا آغاز کیا ہے، جس کا مقصد ایک ایسی صنعتی معیشت تک پہنچنا ہے جو سرمایہ کاری کو راغب کرے اور اقتصادی تنوع کے حصول میں اپنا کردار ادا کرے۔ اس کا مقصد وژن سعودی عرب 2030 کے مقاصد کے مطابق گھریلو مصنوعات اور غیر تیل کی برآمدات کو ترقی دینا ہے۔

سعودی عرب کی سرکاری پریس ایجنسی ’ایس پی اے‘ کے مطابق ولی عہد نے کہا کہ "ہمارے پاس ایک مسابقتی اور پائیدار صنعتی معیشت تک پہنچنے کے تمام امکانات موجود ہیں، جن میں پرجوش نوجوان صلاحیتوں، بہترین جغرافیائی محل وقوع، بھرپور قدرتی وسائل اور سرکردہ قومی صنعتی کمپنیاں شامل ہیں۔ صنعت کے لیے قومی حکمت عملی کے لیے نجی سیکٹر کے ساتھ شراکت کے ذریعے مملکت ایک سرکردہ صنعتی طاقت بن جائے گی جو عالمی سپلائی چینز کو محفوظ بنانے میں اپنا حصہ ڈالے گی اور دنیا کو ہائی ٹیک مصنوعات برآمد کرے گی۔

ویژن 2030 کا اہم ستون

یہ بات قابل ذکر ہے کہ صنعتی شعبہ سعودی وژن 2030 کے ستونوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے اور قیادت کی طرف سے اسے بہت زیادہ توجہ مل رہی ہے۔ قومی صنعتی ترقی اور لاجسٹکس پروگرام شروع کیا گیا تھا اور اس شعبے کی دیکھ بھال کے لیے ایک خود مختار وزارت قائم کی گئی تھی اور بہت سے پروگرام اور دیگر ادارے، جن کے نتیجے میں صنعتی اداروں کی تعداد دوگنی ہو گئی۔ان کی تعداد بیالیس سال کے عرصےمیں 7,206 تک محدود تھی، وژن کے آغاز کے بعد ان کی تعداد میں 50 فیصد سے زیادہ کا اضافہ ہوا، 2022 میں 10,640 صنعتی سہولیات تک جا پہنچی۔ صنعت کی قومی حکمت عملی اس شعبے کی ترقی کا سفر جاری رہا تو 2035ء تک فیکٹریوں کی تعداد تقریباً 36,000 فیکٹریوں تک پہنچ جائے گی۔

صنعت کے لیے قومی حکمت عملی مملکت میں صنعتی معیشت کو متنوع بنانے کے لیے 12 ذیلی شعبوں پر بھی توجہ مرکوز کرتی ہے، جبکہ ایک کھرب سعودی ریال کی مالیت کے 800 سے زائد سرمایہ کاری کے مواقع کی پیدا ہونے کے امکانات ہیں۔ اس شعبے کے لیے پائیدار ترقی کا ایک نیا باب قائم کیا جا سکے گا۔ 2030 تک مملکت کے لیےمعاشی منافع، بشمول ملکی پیداوار کو دو گنا کرنا صنعتی برآمدات میں 3 گنا اضافہ، اور صنعتی برآمدات کی مالیت دگنی ہو کر 557 ارب سعودی ریال تک پہنچ گئی۔

1.3 ٹریلین ریال

یہ حکمت عملی اس شعبے میں اضافی سرمایہ کاری کی کل مالیت کو 1.3 کھرب ریال تک لانے اور جدید ٹیکنالوجی کی مصنوعات کی برآمدات کو تقریباً 6 گنا بڑھانے کے لیے بھی کام کرتی ہے، اس کے علاوہ دسیوں ہزار معیاری ملازمتیں اعلیٰ مالیت کی تخلیق کرتی ہیں۔

صنعت کے لیے قومی حکمت عملی کے ذریعے مملکت نجی شعبے کو بااختیار بنانے، صنعتی لچک کے علاوہ صنعتی شعبے کی لچک اور مسابقت کو بڑھانے کی خواہش رکھتی ہے، جو شہریوں کی فلاح و بہبود کے لیے اہم اشیاء تک رسائی کے تسلسل کو یقینی بناتی ہے۔ اقتصادی سرگرمی، ویلیو چینز کے علاقائی صنعتی انضمام کی رہ نمائی اور سعودی معیشت میں مضبوطی سے فائدہ اٹھانا، نئی ٹیکنالوجیز میں سرمایہ کاری کر کے منتخب اشیاء کے گروپ میں عالمی قیادت حاصل کرنا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں