قضیہ فلسطین کی تازہ صورت حال پرغور کے لیے مصرمیں سہ فریقی اجلاس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مصرکی میزبانی میں فلسطینی اتھارٹی اور اردن کی شرکت سے قضیہ فلسطین کی تازہ صورت حال، آزاد فلسطینی ریاست کےقیام، بیت المقدس کو اس کا دارالحکومت بنانے اور دیگر امور پر بحث کے لیے اجلاس آج سوموار کو العلمین شہرمیں ہو رہا ہے۔

مصری صدر عبدالفتاح السیسی کی دعوت پر پیر کے روز مصر کے شمال میں العلمین شہر میں مصر- اردن- فلسطین کا سربراہی اجلاس منعقد ہوا جس میں فلسطینی کاز میں پیشرفت اور متعدد مسائل پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔ اس میں عرب، علاقائی اور بین الاقوامی سطح کے مسائل پر گفت و شنید کی گئی۔

قاہرہ میں فلسطینی سفیر دیاب اللوح نے اعلان کیا کہ فلسطینی صدر محمود عباس مصری صدر عبدالفتاح السیسی کی دعوت پرکل اتوار کو قاہرہ پہنچے۔ جب کہ اجلاس میں آج سوموار کو اردن کے فرمانروا شاہ عبداللہ دوم نے بھی شرکت کی۔

دیاب اللوح نے کہا کہ یہ سربراہی اجلاس عرب، علاقائی اور بین الاقوامی سطح پر مختلف مسائل پر مستقل اور مسلسل مشاورت اور تعاون کی ایک علامت کے طور پر سامنے آیا ہے۔ اجلاس کا مقصد سیاسی، علاقائی اور بین الاقوامی تحریکوں سے نمٹنے کے لیے تینوں رہ نماؤں کے درمیان ویژن کو یکجا کرنا بھی ہے۔ یکجا ہوکر فلسطینی عوام کے مصائب کا خاتمہ کرنے اور ان کے جائز قومی حقوق حاصل کرنے کام کرنے کی کوشش کی جائے گی۔

چند روز قبل العلمین شہر میں فلسطینی صدر کی موجودگی میں فلسطینی دھڑوں کا ایک اجلاس منعقد ہوا جس میں مختلف مسائل پر بات چیت کا مقصد تقسیم کی حالت کے خاتمے اور فلسطینیوں کے قومی اتحاد کی بحالی کی کوشش کرنا تھا۔

اس کے بعد صدر السیسی اور محمود عباس کے درمیان مصری فلسطینی سربراہی اجلاس منعقد ہوا جس میں فلسطینی کاز سے متعلق متعدد امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ خاص طور پر امن عمل کو بحال کرنے کے حوالے سے موقف اور نقطہ نظر کو مربوط کرنے کے طریقوں پر غور کیا گیا تھا۔ اس ملاقات میں دو ریاستی حل کی بنیاد پر فلسطینیوں کے جائز حقوق کے تحفظ کی ضرورت پر زور دیا گیا تھا۔

اس اجلاس میں 4 جون 1967ء کے خطوط پر ایک آزاد، خودمختار فلسطینی ریاست کے قیام پر زور دیا گیا۔ یہ بھی باور کرایا گیا کہ اس مجوزہ فلسطینی ریاست کا دارالحکومت مشرقی القدس ہو گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں