فلسطین اسرائیل تنازع

’شدید زخمی فلسطینی ماں نے دم توڑنے سے قبل بچے کو جنم دیتے وقت کیا سوچا ہو گا‘

غزہ کی شدید زخمی خاتون جس نے اپنی موت سے پہلے بچے کو جنم دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ کی پٹی میں سانحات بدستور جاری ہیں اور ہر طرف قیامت کا منظر ہے۔ یہ قیامت 7 اکتوبر سے فلسطینی دھڑوں اور اسرائیل کے درمیان جنگ کی شک میں جاری ہے مگر تا حال اس کا کوئی حل نہیں نکل سکا ہے۔

گذشتہ دو دنوں کے دوران سوشل میڈیا پر ایک ویڈیو تیزی سے وائرل ہو رہی ہے جس میں غزہ کی پٹی کے ایک ہسپتال میں ایک نوزائیدہ بچے کو دکھایا گیا ہے۔

تاہم اس کی کہانی دل دہلا دینے والی ہے۔ اس چھوٹے بچے کی ماں اسرائیلی بمباری میں زخمی ہوئی تھیں۔ وہ 32 ہفتوں سے امید سے تھی۔ اپنے گھر پر بمباری کے نتیجے میں وہ شدید زخمی ہوگئی تھی۔

اسے ہسپتال لے جایا گیا جب وہ آخری سانسیں لے رہی تھی تو ڈاکٹروں نے جلدی سے اس کی ڈیلیوری کر دی۔

بمباری میں اس کے خاندان کے تمام 11 افراد کے مارے جانے کے بعد بچہ یتیم ہوگیا۔

ہزاروں فلسطینیوں کو قتل کردیا گیا

قابل ذکر ہے کہ 7 اکتوبر کو حماس نے اچانک حملہ کیا تھا جس کے دوران اس نے اسرائیلی بستیوں میں دراندازی کی تھی اور 1400 سے زائد افراد کو قتل کردیا گیا۔

اسرائیلی حکام کے مطابق حماس نے غیر ملکیوں سمیت 200 سے زائد افراد کو حراست میں بھی لیا۔

اسرائیل نے غزہ کی پٹی پر شدید بمباری شروع کر رکھی ہے۔ وزارت صحت کی طرف سے بدھ کو جاری کردہ تازہ ترین اعدادو شمار سے پتا چلتا ہے کہ 2704 بچوں سمیت 6,546 فلسطینی شہید ہوچکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں