اسرائیلی فوج کا غزہ بندرگاہ کا کنٹرول سنبھالنے کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

جمعرات کو غزہ میں اسرائیلی فوج اور فلسطینیوں کے درمیان جاری لڑائی روکنے کی تمام تر کوششوں کے باوجود فوری جنگ بندی کی کوئی امید نظر نہیں آتی۔

تازہ ترین پیش رفت میں العربیہ اور الحدث کے نامہ نگار نے سدیروت اور غزہ کے آس پاس کے قصبوں کی طرف راکٹ داغنے کی اطلاع دی ہے۔

دوسری طرف اسرائیلی فوج نے کہا ہے کہ اس نے غزہ بندرگاہ کا کنٹرول تقریبا مکمل طور پرحاصل کرلیا ہے۔ حماس اس بندرگاہ کو ’دہشت گردی‘ کے مقاصد کے لیے استعمال کررہی تھی۔

انہوں نے کہا کہ المرسی کے علاقے کی تمام عمارتوں کو کلیئر کیا جا رہا ہے اور اس آپریشن میں تمام فورسز حصہ لے رہی ہیں۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان نے کہا کہ فوج نے غزہ میں بندرگاہ کے علاقے کا کنٹرول سنبھال لیا ہے اور علاقے کی تمام عمارتوں کو "کلیئر" کر دیا ہے۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان ڈینیئل ہاگری نے ایک بیان میں مزید کہا کہ اسرائیلی فورسز دس عسکریت پسندوں کو ہلاک کرنے اور بندرگاہ کے علاقے پر کنٹرول حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئیں۔

ترجمان نے علاقے میں یادگار کی تباہی کی تصویر پوسٹ کی۔ انہوں نے بات جاری رکھتے ہوئے کہا کہ تقریباً دس سرنگوں کی گزرگاہیں اور چار عمارتیں تباہ ہو گئیں۔

انہوں نے نشاندہی کی کہ ان کی افواج نے "تقریباً دس سرنگوں اور چار عمارتوں کو تباہ کر دیا جو دہشت گردی کے بنیادی ڈھانچےکا حصہ تھیں۔

انہوں نے حماس پر الزام لگایا کہ وہ اس بندرگاہ کو "دہشت گردی کے مقاصد اور بحری افواج کے لیے تربیتی سہولت کے طور پر استعمال کر رہی تھی‘‘۔

دوسری طرف اسرائیلی فضائیہ نے جنوبی غزہ کی پٹی میں خان یونس کے مشرقی علاقوں پر رات کے وقت پمفلٹ گرائےہیں جن میں خان یونس کے مشرق میں رہنے والوں سے کہا گیا ہے کہ وہ فوجی کارروائی سے قبل فوری طور پر علاقہ خالی کریں۔

اسی طرح کے کتابچے تقریباً دو ہفتے قبل گرائے گئے تھے لیکن اس بار ان کے بعد مشرقی محلوں پر اسرائیلی ٹینکوں کی شدید بمباری کی گئی۔

شمال سے بے گھر ہونے والے دسیوں ہزار لوگ پہلے ہی اسکولوں اور خیموں میں پناہ لے چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں