فلسطین اسرائیل تنازع

ہم نہ چھوڑیں تو اسرائیل کبھی بھی اپنے قیدیوں کو بازیاب نہیں کراسکتا: ھنیہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

حماس کے پولیٹیکل بیورو کے سربراہ اسماعیل ہنیہ نے زور دے کر کہا ہے کہ جب تک تمام فلسطینی قیدیوں کو اسرائیلی جیلوں سے رہا نہیں کیا جاتا اسرائیل کبھی بھی اپنے قیدیوں کو بازیاب نہیں کرسکے گا۔

انہوں نے منگل کے روز قطر کے دارالحکومت دوحہ میں منعقدہ انٹرنیشنل یونین آف مسلم اسکالرز کی کانفرنس کے دوران خطاب میں مزید کہا کہ اسرائیل غزہ کی پٹی پر جاری جنگ میں "قتل عام اور نسل کشی کے باوجود اپنے کسی بھی اہداف کو حاصل کرنے میں ناکام رہا ہے‘انہوں نے غزہ میں جاری جنگ کو نسل کشی کی جنگ قرار دیتے ہوئے اسرائیل پر غزہ میں نہتے فلسطینیوں کے اجتماعی قتل عام کا الزام عاید کیا۔

قیدیوں کے اہل خانہ کے لیے تل ابیب میں ایک مارچ
قیدیوں کے اہل خانہ کے لیے تل ابیب میں ایک مارچ

"اسرائیل اپنے اہداف حاصل نہیں کر سکا"

حماس کے لیڈر نے کہا کہ اسرائیل نے تین اہداف طے کیے ہیں: "مزاحمت کا خاتمہ، قیدیوں کی بازیابی اور غزہ سے مصری سرزمین کی طرف نقل مکانی" اور یہ کہ وہ ان میں سے کسی کو حاصل کرنے میں کامیاب نہیں ہوا۔

ہنیہ نے اپنی تقریرمیں نشاندہی کی کہ "جو کچھ ہو رہا ہے وہ غزہ کی پٹی میں ہمارے لوگوں کے خلاف امریکی اسرائیلی جارحیت ہے۔ انہوں نےغزہ میں انسانی صورتحال کو "تباہ کن" قرار دیتے ہوئے صورت حال کی تمام تر ذمہ داری اسرائیل اور امریکا پرعاید کی۔

دریں اثنا حماس کے سیاسی بیورو کے سربراہ نے زور دے کر کہا کہ 7 اکتوبر کو ان کی جماعت کی طرف سے "طوفان الاقصیٰ " آپریشن فلسطین کے مسئلے کو پس پشت ڈالنے کی کوشش کے بعد کیا گیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ مغربی کنارے میں 7 اکتوبر سے اب تک 350 سے زائد افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ مغربی کنارے میں جو کچھ ہو رہا ہے وہ "خطرناک اور فلسطینی آبادی کو خوف زدہ کرنے بدترین اسرائیلی کوشش ہے۔

240 اسرائیلی قیدی

ہنیہ کا بیان امریکی وزیر خارجہ انٹونی بلنکن کے آج اسرائیل پہنچنے کے موقع پر سامنے آیا ہے۔ امریکی وزیرخارجہ نے حماس اور غزہ میں باقی فلسطینی دھڑوں کے زیر حراست افراد کی واپسی کے لیے ہر ممکن کوشش کرنے کی ضرورت پر زور دیا۔

قابل ذکر ہے کہ غزہ پر اسرائیلی حملے میں 23 ہزار سے زائد فلسطینیوں کی ہلاکت، چھوٹی ساحلی پٹی کے ایک بڑے حصے کی تباہی اور 23 لاکھ افراد کی آبادی کا بیشتر حصہ بے گھر ہو گیا، جس نے انسانی بحران کو ایک خوفناک انسانی المیے میں تبدیل کردیا ہے۔

گذشتہ سات اکتوبر کو حماس کے اسرائیل پر اچانک حملے میں 1200 افراد کی ہلاکت اور 240 کو یرغمال بنا لینے کے بعد اسرائیل نے غزہ کی پٹی پر فضائی ، زمینی اور سمندری اطراف سے تباہ کن حملے شروع کیے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں