غرب اردن کی اسرائیلی بستیوں پر حملہ، تمام عسکریت پسند ہلاک: اسرائیلی فوج

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اسرائیلی فوج نے کہا کہ اس نے جمعہ کو مقبوضہ مغربی کنارے میں ایک یہودی بستی پر حملہ کرنے والے تین عسکریت پسندوں کو ہلاک کر دیا۔

فوج نے ایک بیان میں کہا ہے کہ الخلیل شہر کے مغرب میں تقریباً 20 کلومیٹر (12 میل) کے فاصلے پر واقع ادورا بستی میں "دہشت گردانہ دراندازی" ہوئی اور اسرائیلی فوجیوں کو فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا۔

بیان میں کہا گیا کہ فوجیوں نے علاقے کی تلاشی لی اور "تین حملہ آوروں کو شناخت کر کے قتل کر دیا"۔

خبر رساں ایجنسی اے ایف کے مطابق اسرائیلی فوج نے تینوں حملہ آوروں کی ہلاکت کی تصدیق کی جبکہ فلسطینی ایجنسی وفا نے ان کی شناخت ایک 19 سالہ اور دو 16 سالہ لڑکوں کے طور پر کی۔

اسرائیلی ایمرجنسی میڈیکل سروس نے کہا کہ اس کی ٹیم ایک ایسے شخص کا علاج کر رہی ہے جس کی ٹانگ میں گولی لگی تھی۔ میڈیکل سروس نے زخمی شخص کی شناخت نہیں کی۔

فلسطینی حکام نے ابھی تک اس واقعے پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے۔

مغربی کنارے میں ایک الگ واقعے میں فلسطینی وزارتِ صحت نے کہا کہ طولکرم شہر میں اسرائیلی فورسز کے ہاتھوں شدید تشدد کے بعد ایک شخص جاں بحق ہوگیا۔

مشرقی بیت المقدس کو چھوڑ کر تقریباً 490,000 اسرائیلی مغربی کنارے کی بستیوں میں رہتے ہیں جنہیں بین الاقوامی قوانین کے تحت غیر قانونی سمجھا جاتا ہے۔

فلسطینی وزارتِ صحت کے مطابق گذشتہ سال مغربی کنارے میں 520 سے زائد فلسطینی جاں بحق ہوئے۔

اسی عرصے کے دوران فلسطینی مزاحمت کاروں نے اسرائیل اور مغربی کنارے میں حملے کیے جن میں شن بیت سکیورٹی ایجنسی کے مطابق کم از کم 41 افراد ہلاک ہوئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں