اسرائیل غزہ میں فلسطینیوں کی نسل کشی کر کے ہٹلر کا کردار ادا کر رہا ہے: برازیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

غزہ میں جہاں اتوار کے روز اسرائیلی فوج کے ہاتھوں فلسطینی ہلاکتوں کی تعداد 29 ہزار کو چھو گئی ہے اور امریکہ سمیت کئی یورپی ملک غزہ میں اسرائیلی جنگ کو اسرائیل کا حق دفاع قرار دیتے ہیں وہیں انسانی حقوق کو اہمیت دینے والی دنیا کا بڑا حصہ فلسطینیوں کی اس نسل کشی پر اسرائیل کی سخت مذمت کرتا ہے۔ برازیل بھی اسرائیل کی مذمت کرنے والے ان ممالک میں سے ایک ہے۔

برازیل کے صدر لولا دا سیلوا نے اتوار کے روز غزہ میں اسرائیلی فوج ہاتھوں فلسطینیوں کے اس اندھا دھند قتل عام کو نسل کشی کانام دیا ہے۔ اس نسل کشی کے مرتکب اسرائیل کو ہٹلر کا کردار ادا کرنے والا قرار دیا ہے ، جس نے یہودیوں کی نسل کشی کی تھی۔

صدر لولا دا سیلوا نے کہا ' اس وقت غزہ میں جو کچھ ہو رہاہے یہ نسل کشی ہے۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار عدیس بابا میں افریقی یونین کی کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ افریقی ملک جنوبی افریقہ نے بھی اسرائیل کے ہاتھوں فلسطینیوں کی نسل کشی کو بین الاقوامی عدالت انصاف میں ایک مقدمے کے طور پر حالیہ مہینوں میں پیش کیا تھا۔

اب افریقہ کی سرزمین پر برازیلی صدر نے کہا ' جو کچھ اسرائیلی فوج کر رہی ہے یہ سپاہیوں کی سپاہیوں کے خلاف جنگ نہیں ہے۔ یہ ایک انتہائی جدید اسلحے سے لیس فوج کی عورتوں اور بچوں کے خلاف جنگ ہے۔ '

انہوں نے مزید کہا دنیا اس وقت جوکچھ غزہ میں ہوتے ہوئے دیکھ رہی ہے وہ ماضی میں کبھی بھی نہیں ہواہے، تاریخ اس وحشیانہ جنگ کی مثال نہیں پیش کر سکتی ہے۔ جس کا نشانہ عورتیں اور بچے ہوں۔' البتہ یہ ویسا ہی جیسا ہٹلر نے یہودیوں کے ساتھ کیا تھا۔

78 سالہ برازیلی صدر کی طرف سے فلسطینی عوام کے حق میں یہ مضبوط ترین الفاظ گروپ 20 کی سربراہی کے بعد پہلی مرتبہ ظاہر کیے گئے ہیں۔ انہوں نے حماس کی طرف سے سات اکتوبر کو اسرائیل پر کیے گئے حملے کی بھی مذمت کی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں