ایران کے خلاف جارحانہ دفاع کی حکمت عملی بروئے کار ہے : نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی وزیراعظم نے ایران کے خلاف حالیہ کارروائیوں کے پس منظر میں کہا ہے اسرائیل ایران کے خلاف جارحانہ دفاع کی حکمت عملی پر کاربند ہے۔ جس کے تحت اپنے دفاع کے لیے اسرائیل جارحانہ اقدامات کر رہا ہے۔ بڑے واضح اور جارحانہ انداز سے نیتن یاہو نے کہا 'ہم اس ہر ایک کو نقصان پہنچائیں گے جو ہمیں نقصان پہنچائے گا یا ہمیں نقصان پہنچانے کا منصوبہ بنائے گا۔'

غزہ میں جنگ کے چھ ماہ مکمل ہوتے ہی اسرائیل نے اپنے اردگرد موجود پڑوسی ملکوں کے خلاف جارحانہ اقدامات میں شدت پیدا کرتے ہوئے اپنے تمام فوجیوں کی چھٹیاں منسوخ کر دی ہیں۔ یہ ایک طرح سے غیراعلانیہ طور پر ہنگامی حالت کا اعلان ہے۔ جو اسرائیل کی طرف سے جمعرات کے روز سامنے آیا ہے۔

اسرائیلی وزیراعظم نے یہ بھی اعلان کیا ہے کہ اسرائیلی زمینی اور فضائی فوج کے کئی یونٹس کو مزید تعینات کر دیا گیا ہے۔ خیال رہے اسرائیلی وزیر دفاع کے امریکہ کے حالیہ دورے کے بعد سے خطے میں اسرائیل کی اگلی حکمت عملی کے پرت کھل رہے ہیں۔

تل ابیب میں ایران کے امکانی جوابی حملوں کے خوف سے پریشانی کی لہر دوڑ گئی ہے۔ اسرائیلی دارالحکومت میں جمعرات کے روز 'نیویگیشنل سگنل' معطل کر کے 'مواصلاتی بلیک آؤٹ' کی کیفیت پیدا کردی گئی۔ ' نیویگیشنل سگنل' دارالحکومت میں ایران کے جوابی حملے کے خوف سے معطل کر دیے گئے تھے۔

اسرائیلی حکومت کے اس اقدام کے نتیجے میں شہریوں کو ٹریفک میں تاخیر کے ساتھ ساتھ کھانے پینے کی اشیا کی ترسیل اور نقل و حمل کے لیے کی جانے والی درخواستوں میں بھی مشکل کا سامنا کرنا پڑا کہ 'نیویگیشنل سگنل' میں خرابی کے باعث تل ابیب کے رہائشیوں کو تل ابیب کی بجائے بیروت میں دکھایا جاتا رہا۔

اسرائیل کی طرف سے یہ احتیاطی تدابیر اس کے باوجود سامنے آئی ہیں کہ ایرانی ذرائع کہہ رہے ہیں کہ اسرائیلی حملوں کے مقابلے میں ایران کا جواب نپا تلا ہوگا اور اس کی کوشش یہ ہوگی کہ جنگ کا میدان وسیع ہو۔ اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو کا جنگی کابینہ کے اجلاس میں کہنا تھا کہ ایران کئی برسوں سے اسرائیل کے خلاف خود یا اپنی 'پراکسیز' کے ذریعے کارروائیاں کر رہا ہے۔ اس لیے ایران اور اس کی 'پراکسیز' کا اسرائیل جواب دے رہا ہے۔'

نیتن یاہو نے مزید کہا 'ہمیں پتہ ہے کہ ہمیں کیسے اپنا دفاع کرنا ہے۔ ہم اس سیدھے سادھے اصول کے تحت اپنا دفاع جاری رکھیں گے کہ ہر اس ملک کو نقصان پہنچائیں گے جو ہمیں نقصان پہنچاتا ہے یا ہمیں نقصان پہنچانے کا منصوبہ بناتا ہے۔'

اس تناظر میں صدر جوبائیڈن اور نیتن یاہو کے درمیان ہونے والی تازہ گفتگو بھی بڑی اہم ہے۔ جوبائیڈن کا کہنا تھا کہ اسرائیل کو درپیش ان خطرات کے باعث امریکہ اسرائیل کے لیے اپنی حمایت جاری رکھے گا۔

بین الاقوامی خبر رساں ادارے 'رائٹرز' کے مطابق اسرائیل کے اہم تجارتی مرکز تل ابیب میں 'نیویگیشنل سگنلز' کی معطلی میزائلوں سے بچنے کے لیے کی گئی تھی۔ شام کے دارالحکومت میں ایرانی سفارتی کمپاؤنڈ پر ہونے والے اسرائیلی حملے میں ہلاک ہونے والے اپنے دو جرنیلوں اور پانچ فوجی مشیروں کی ہلاکت کے بدلے کے طور پر یہ میزائل داغا گیا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں