.

پاکستان ایران ، سعودی عرب میں تعمیری مصالحتی کردار ادا کرنے کو تیار ہے: عمران خان

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

پاکستان تحریک ِانصاف ( پی ٹی آئی ) کے چیئرمین اور متوقع وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان ایران اور سعودی عرب کے درمیان مصالحت کے لیے تعمیری اور مثبت کردار ادا کرنے کو تیار ہے۔

انھوں نے یہ بات ہفتے کے روز اسلام آباد کے علاقے بنی گالا میں اپنی رہائش گاہ پر ایرانی سفیر مہدی ہنردست سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ہے۔ ایرانی سفیر پاکستان میں منعقدہ حالیہ عام انتخابات میں پی ٹی آئی کی کامیابی پر انھیں مبارک باد دینے کے لیے آئے تھے۔انھوں نے ایرانی صدر حسن روحانی کی جانب سے بھی عمران خان کو تہنیتی پیغام پہنچایا۔

مہدی ہنردست نے عمران خان سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ایران علاقائی امور میں پاکستان کے ساتھ تعاون کو تیار ہے اور وہ اس کے ساتھ تجارتی تعلقات کا فروغ چاہتا ہے۔انھوں نے ’’پاکستان سے ایران ، پاکستان گیس پائپ لائن منصوبے پر مذاکرات کی خواہش کا بھی اظہار کیا‘‘ اور کہا کہ ’’یہ منصوبہ پاکستان کا مستقبل تبدیل کرسکتا ہے‘‘۔

عمران خان نے ایرانی حکومت کا شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا پاکستان کے اس موقف کا اعادہ کیا کہ وہ ایران اور دوسرے ہمسایہ ممالک کے ساتھ تجارت کا فروغ چاہتا ہے۔انھوں نے ایران کے اپنی خود مختاری کے تحفظ کے لیے کردار کو بھی سراہا اور ایران کے تاریخی مقامات کی سیر کی خواہش کا اظہار کیا۔

ملاقات میں پی ٹی آئی کے قائدین شاہ محمود قریشی ، شیریں مزاری اور نعیم الحق بھی موجود تھے۔25 جولائی کو منعقدہ عام انتخابات میں پی ٹی آئی کے قومی اسمبلی میں اکثریتی جماعت بن کر ابھرنے کے بعد ایرانی سفیر سے قبل اسلام آباد میں متعیّن ،برطانیہ ، چین ، جاپان ، سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات کے سفراء عمران خان سے الگ الگ ملاقاتیں کرچکے ہیں۔

بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے بھی ٹیلی فون پر عمران خان سے بات چیت کی تھی اور عام انتخابات میں ان کی جماعت کی جیت پر انھیں مبارک باد دی تھی۔انھوں نے کہا تھا کہ ’’ بھارت (عمران خان کے نئے ) پاکستان کے ساتھ تعلقات کے ایک نئے دور میں داخل ہونے کو تیار ہے‘‘۔