نیب نے ویڈیو سکینڈل کو ’’پراپیگنڈہ‘‘ قرار دے کر مسترد کر دیا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

پاکستان کے قومی احتساب بیورو ’’نیب‘‘نے نجی ٹی وی چینل نیوز ون پر چیئرمین نیب کے حوالے سے نشر ہونے والی خبر کی سختی سے تردید کرتے ہوئے اسے حقائق کے منافی، من گھڑت، بے بنیاد اور جھوٹ پر مبنی پراپیگنڈہ قرار دیا ہے۔

جمعرات کو نیوز ون چینل نے ایسی ویڈیو اور آڈیو نشر کی جس میں مبینہ طور پر چیئرمین نیب جسٹس (ر) جاوید اقبال کو ایک خاتون سے نازیبا گفتگو کرتے ہوئے سنا جا سکتا ہے۔

ویڈیو نشر کیے جانے کے بعد جمعرات کی شب نیب کے ترجمان کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ چیئرمین نیب کے حوالے سے یہ خبر بلیک میلنگ کر کے نیب ریفرنس سے فرار کا راستہ ہے۔

بیان میں کہا گیا ہے کہ اس خبر کے پیچھے ایک بلیک میلرز کا گروپ ہے اور اس عمل کا مقصد ادارے اور چیئرمین نیب کی ساکھ کو مجروح کرنا ہے۔

نیب کے بیان کے مطابق تمام تر دباؤ اوربلیک میلنگ کو پس پشت ڈالتے ہوئے ادارے نے اس گروہ کے دو افراد کو نہ صرف گرفتار کیا ہے بلکہ ریفرنس کی بھی منظوری دے دی ہے۔

خیال رہے کہ چینل کی جانب سے ویڈیو اور آڈیو نشر کیے جانے کے کچھ دیر بعد معذرتی پیغام بھی نشر کیا گیا جس میں کہا گیا کہ یہ خبر سیاق و سباق سے ہٹ کر چلائی گئی جس پر ادارہ چیئرمین نیب سے معدزت خواہ ہے۔ لیکن اس خبر کا خمیازہ چینل کے مالک اور وزیر اعظم عمران خان کے مشیر برائے میڈیا پالیسی طاہر اے خان کوعہدے سے ہٹائے جانے کی صورت میں بھگتنا پڑا۔

تاہم اس وقت تک پاکستانی سوشل میڈیا پر چیئرمین نیب کا نام ٹرینڈ کر رہا تھا اور لوگ اس ویڈیو کے بارے میں بھانت بھانت کے تبصرے کر رہے تھے۔

چیئرمین نیب جاوید اقبال صحافی جاوید چوہدری کو دیے گئے ایک مبینہ انٹرویو کے بعد پہلے ہی گزشتہ چند روز سے خبروں میں ہیں۔جاوید چوہدری نے رواں مہینے کی 16 اور 17 تاریخ کو روزنامہ ایکسپریس میں ’چیئرمین نیب سے ملاقات‘ کے عنوان سے دو کالم تحریر کیے تھے جس میں انھوں نے انٹرویو میں کی گئی باتوں کا تفصیلی ذکر کیا تھا۔

تاہم قومی احتساب بیورو کی جانب سے اس انٹرویو کی تردید جاری کرتے ہوئے کہا گیا تھا کہ چیئرمین نیب کے حوالے سے بیانات درست نہیں اور کالم میں حقائق کو مسخ کرکے پیش کیا گیا ہے۔نیب کی پریس ریلیز میں کہا گیا تھا ’کالم نگار نے حقائق کو درست انداز میں پیش نہیں کیا بلکہ بعض افراد اور مقدمات کے حوالے سے غلط نتائج بھی اخذ کیے ہیں۔‘

اس سے قبل چیئرمین نیب جاوید اقبال نے کچھ روز قبل اسلام آباد میں پریس کانفرنس میں کہا تھا کہ جمہوریت احتساب سے نہیں بلکہ اعمال کی وجہ سے خطرے میں آتی ہے۔انھوں نے یہ بھی کہا تھا کہ نیب اور معیشت ساتھ ساتھ چل سکتے ہیں لیکن نیب اور کرپشن ساتھ نہیں چل سکتے تاہم قومی ادارہ اپنا کام کرتا رہے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں