عمرہ اور والد کی تیمار داری کرنے جانا ہے، پاسپورٹ واپس کیا جائے: مریم نواز

لاہور ہائی کورٹ کے 2 رکنی بینچ کا مریم کی درخواست پر سماعت آج ہی ہو گی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

پاکستان مسلم لیگ [نواز] کی نائب صدر مریم نواز نے عمرہ کی غرض سے بیرون ملک جانے کی اجازت کے لیے عدالت سے رجوع کر لیا۔ لاہور ہائی کورٹ کا 2 رکنی بینچ مریم نواز کی درخواست پر آج ہی سماعت کرے گا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق مسلم لیگ ن کی مرکزی نائب صدر مریم نواز نے بیرون ملک جانے کے لیے لاہور ہائی کورٹ میں درخواست دائر کی ہے، جس میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ 2019ء میں نیب نے چوہدری شوگر ملز کیس میں گرفتار کیا تھا بعد میں لاہورہائی کورٹ نے ضمانت منظور کی تاہم عدالتی حکم پر پاسپورٹ سرنڈر کر رکھا ہے۔

درخواست میں انہوں نے موقف اختیار کیا ہے وہ بیمار والد نوازشریف کی تیمارداری کے لئے لندن جانا چاہتی ہیں اس کے علاوہ عمرہ کی ادائیگی کے لیے سعودی عرب بھی جانا چاہتی ہوں لیکن پاسپورٹ نہ ہونے کی وجہ سے بیرون ملک نہیں جا سکتی لہذا لاہور ہائیکورٹ میرا پاسپورٹ واپس کرنے کا حکم دے۔

خیال رہے کہ لاہور ہائیکورٹ نے چوہدری شوگر ملز منی لانڈرنگ کیس میں مریم نواز کی درخواست ضمانت منظور کرتے ہوئے انہیں اپنا پاسپورٹ اور ایک ایک کروڑ روپے کے دو مچلکے جمع کرانے کا حکم دیا تھا جس کے بعد چوہدری شوگر ملز منی لانڈرنگ کیس میں مسلم لیگ کی نائب صدر مریم نواز کی ضمانت کے عوض مچلکے اور نقد رقم جمع کرادی گئی ، اس کے علاوہ عدالت نے مریم نواز کی ضمانت کے عوض 7 کروڑ روپے نقد جمع کرانے کا حکم بھی دیا تھا۔

جس پر مریم نواز کے ضمانتی مچلکے جمع کروانے کے لیے کیپٹن ریٹائرڈ صفدر اور عطااللہ تارڑ ہائیکورٹ پہنچے تھے جہاں انہوں نے مریم نواز کا پاسپورٹ سمیت ضمانتی مچلکے جمع کروائے اور ساتھ ہی 7 کروڑ روپے کی رقم بھی جمع کروائی۔

یاد رہے کہ اس سے پہلے مریم نواز نے 24 اکتوبر 2019ء کو اپنے والد نواز شریف کی تیمارداری کے لیے ضمانت کی درخواست دائر کی تھی جس پر عدالت نے 31 اکتوبر کو فیصلہ محفوظ کیا تھا ، نیب پراسیکیوٹر جہانزیب بھروانہ نے مریم نواز کی ضمانت کی مخالفت کی تھی جب کہ مریم نواز کے وکیل امجد پرویز نے انسانی ہمدردی کی بنیاد پر ضمانت دینے کی استدعا کی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں