شمالی وزیرستان کے علاقے میر علی میں چھ مشتبہ حجام قتل، لاشیں کھیت سے برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

شمالی وزیرستان کی تحصیل میر علی کے علاقے موسکی میں پولیس کے مطابق منگل کو ایک کھیت سے چھ حجاموں کی لاشیں برآمد ہوئی ہیں۔

مقامی میڈیا نے اپنے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ شمالی وزیرستان کی تحصیل میر علی کے علاقے موسکی سے چھ لاشیں ملی ہیں۔

تمام افراد کو فائرنگ کرکے قتل کیا گیا ہے اور مقتولین کا تعلق پنجاب سے ہے۔

رپورٹس کے مطابق قتل کیے گئے افراد پیشے کے لحاظ سے حجام تھے اور مقتولین کی میر علی بازار میں ہیئر کٹنگ کی دکانیں تھیں۔

یاد رہے کہ شمالی وزیرستان امن عامہ کے لحاظ سے خیبر پختونخوا کا سب سے متاثرہ ضلع ہے جہاں گذشتہ برس شدت پسندی کے سب سے زیادہ واقعات سامنے آئے ہیں۔

صوبائی محکمہ داخلہ کے اعداد وشمار کے مطابق شمالی وزیرستان میں گذشتہ سال شدت پسندی کے 201 واقعات رپورٹ ہوئے، جن میں 36 سکیورٹی فورسز کے اہلکار جان سے گئے جبکہ 28 عام شہری نشانہ بنے۔

شمالی وزیرستان میں ٹارگٹ کلنگ کے واقعات بھی گذشتہ کئی سالوں سے سامنے آرہے ہیں، جن میں مقامی قبائلی عمائدین، سماجی کارکن اور عام لوگوں کو بھی ہدف بنایا گیا۔

افغان سرحد سے ملحقہ شمالی وزیرستان ماضی میں کالعدم تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کا گڑھ رہا ہے لیکن 2014 میں اس ضلعے میں ایک بڑا فوجی آپریشن کر کے عسکریت پسندوں کے ٹھکانوں کا خاتمہ کیا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں