.

مکہ کمانڈ اینڈ کنڑول سینٹر کا ٹی وی مانیٹرنگ روم 24 گھنٹے چوکس سیکیورٹی کی منفرد مثال

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

عمرہ سیزن کے دوران سیکیورٹی کے انتظامات کی نگرانی کے لیے کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر میں قائم ٹی وی مانیٹرنگ روم انتہائی اہم کردار ادا کرتا ہے۔

ٹی وی مانیڑنگ اینڈ کنٹرول سسٹم کے ذریعے عمرہ کے موقع پر روزمرہ پیش آنے والے واقعات کی نگرانی، گاڑیوں کی آمدورفت کو ریمورٹ کنٹرول سسٹم کے ذریعے کنٹرول اور ہدایات کے ذریعے ٹریفک کے ھجوم کو کم کرنے میں خاطر خواہ مدد ملتی ہے۔

اس اہم شعبہ کی کارکردگی سے متعلق ’’العربیہ‘‘ کے نامہ نگار خمیس الزھرانی نے مختصر دورانیہ کہ ایک ویڈیو رپورٹ تیار کی ہے۔

سعودی حکومت کی طرف سے پورے مکہ مکرمہ میں معتمرین کی حفاظت کے لیے الیکٹرانک فالو اپ سسٹم رائج کیا گیا ہے۔عمرہ سیکیورٹی کے کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر میں قائم ٹی وی مانیرنگ سیل سے چپے چپے پر نظر رکھی جا رہی ہے اور کوئی بھی مقام اور منظر کیمرے کی آنکھ سے اوجھل نہیں۔

کرنل طارق الغبان نے ’’العربیہ‘‘ کو بتایا کہ ہمارا کام تمام کمانڈ اینڈ کنڑول مراکز کے درمیان کوارڈی نیشن ہے جس کے تحت ہم رش کے اوقات میں اسے کنٹرول کرنے سے متعلق ہدایات دیتے ہیں۔نیز رش کے اوقات اور مقامات سے متعلق اپنے فیلڈ افسران وعملے کو پیشگی ہدایات جاری کرتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق مکہ معظمہ کے داخلی راستوں اور وسطی علاقے میں مختلف مقامات پر 2500 کیمرے نصب کیے گئے ہیں جن سے ٹریفک اور لوگوں کے ھجوم پر نظر رکھی جاتی ہے۔ ان کیمروں کی مدد سے بسوں کی روانی اور زائرین کی مسجد حرام پرسکون نقل وحرکت یقینی بنانے کے لیے ضروری ہدایات فراہم کی جاتی ہیں۔

کرنل الغبان نے بتایا ’’کہ مانیٹرنگ کے جدید نیٹ ورک کے ذریعے ہم مسجد حرام کے احاطے اور باہر متعمرین اور زائرین کی آمد وبرخاست کو کنڑول کرتے ہیں۔ مسجد حرام آنے والے افراد مکہ مکرمہ کے مختلف داخلی راستے، زیر زمین سرنگیں اور اوور ہیڈ برج استعمال کرتے ہیں۔مختلف سمتوں سے آنے والے زائرین کو مسجد حرام کے مخصوص داخلی دروازوں کے ذریعے مسجد کے احاطے میں داخلے کو یقینی بنایا جاتا ہے تاکہ سارا رش چند ہی داخلی دروازوں پر نہ ہونے پائے۔‘‘

سیکیورٹی کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر کو جدید ترین الیکٹرانک مانیٹرنگ کے آلات سے لیس کیا گیا ہے۔ یہ جدید آلات ہر قسم کے مناظر کو فوری ریکارڈ کرنے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔ اس کے علاوہ مکہ کی شاہرائوں کی ٹریفک پر الگ الگ سکرینوں کے ذریعے نظر رکھی جاتی ہے۔

ماہ صیام کے پہلے تین دنوں میں کمانڈ اینڈ کنٹرول سینٹر نے مکہ معظمہ کے داخلی راستوں پر ایک ملین سے زاید گاڑیوں کی مانیڑنگ کی۔ توقع ہےکہ ماہ مہربانی کے اواخر تک یہ تعداد ایک کروڑ گاڑیوں سے تجاوز کر جائے گی۔