.

راہ گیر کے مکے سے برطانوی شہری کی جان نکل گئی

مجرم کو ساڑھے چار سال قید پر مقتول کے لواحقین حیرت زدہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

حضرت موسیٰ کا ایک قبطی کو مکا مار کر قتل کر ڈالنے کا واقعہ تاریخی کتابوں میں موجود ہے مگر حال ہی میں اسی نوعیت کا ایک واقعہ برطانیہ میں بھی پیش آیا ہے، جہاں ایک راہ گیر کے دوسرے کو بغیر کسی وجہ کے مُکا دے مارا جس کے نتیجے مکے کا ہدف بننے والا اپنی جان سے ہاتھ دھو بیٹھا۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق اخبار "ڈیلی میل" نے اپنی ویب سائٹ پر اس مجرمانہ واقعے کی ویڈیو فوٹیج بھی نشر کی ہے۔ اس میں ایک راہ گیر کو اچانک ایک دوسرا شخص مکا مار کر گراتا ہے جس سے مکا کھانے والے کی موت واقع ہو جاتی ہے۔ یہ سارا عمل ایک سیکنڈ سے بھی کم مدت میں مکمل ہوتا دیکھا جا سکتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق چالیس سالہ انڈرو یونگ جنوبی شہر "بورن موتھ " کی ایک مصروف شاہراہ کے فٹ پاتھ پر جا رہا تھا۔ راہ گیروں کا بھی رش تھا اور کچھ لوگوں نے اپنی سائیکلیں بھی فٹ پاتھ پر چڑھا رکھی تھیں۔ اس دوران ایک سائیکل سوار انڈرو کے قریب سے گذرنے لگا تو اس نے روک کر اسے کہا کہ آپ کو فٹ پاتھ پر سائیکل نہیں چلانا چاہیے کیونکہ اس سے راہ گیروں کو نقصان پہنچ سکتا ہے۔

سائیکل سوار ویکٹور آئبٹوری نے تو کوئی جواب نہ دیا لیکن اس کے ساتھ پیدل چلنے والے اس کے ایک دوست لوئس گیل نے پلک جھپکتے ہی انڈرو کو مکا دے مارا۔ زوردار مکا لگتے وہ سڑک پر گر پڑا اور فورا بے ہوش ہو گیا۔ اسے اسپتال پہنچایا گیا مگر وہ جاںبر نہ ہو سکا اور کچھ ہی دیر بعد انتقال کر گیا۔

راہ گیر پر دوسرے شخص کے حملے کا یہ سارا واقعہ ایک کلوز سرکٹ کیمرے میں محفوظ ہو گیا تھا جو اب انٹرنیٹ پر تیزی سے مقبول ہو رہا ہے۔

پولیس نے قاتل کو حراست میں لے کراس کے خلاف قانونی کارروائی شروع کی۔ مقتول کے لواحقین کو انصاف کی توقع تھی لیکن برطانوی اخبار "ڈیلی میل" کے مطابق لواحقین اس وقت عدالت کا فیصلہ سن کر حیران رہ گئے جب انہیں بتایا گیا کہ عدالت نے قاتل کو صرف ساڑھے چار سال قید کی سزا سنائی ہے۔

برطانوی عدالت کی جانب سے مجرم کو سنائی جانے والی سزا کے تفصیلی فیصلے میں کہا گیا ہے کہ چونکہ لوئس گیل نے یہ قتل دانستہ طور پر نہیں کیا ہے۔ غیر ارادی طور پر کیے گئے حملے میں یہ موت واقع ہوئی ہے۔ اس لیے ملزم کو ساڑھے چار سال قید کی سزا سنائی جاتی ہے۔