!سعودی طالبہ کی منفرد ایجاد، اب گونگے بھی ڈرائیونگ کا لطف اٹھا سکیں گے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہونہار سعودی طالبہ ریناد بنت مساعد الحسین کی ایک منفرد ایجاد نے قوت گویائی سے محروم افراد کے پرلطف انداز میں گاڑی چلانے کے خواب کو شرمندہ تعبیر کرنے کا اعزاز اپنے نام کر لیا ہے۔

مملکت کی سرکاری خبر رساں ایجنسی ’’ایس پی اے‘‘ کے مطابق سعودی نوجوان زندگی کے مختلف شعبوں میں کارنامے انجام دے رہے ہیں۔ وہ معاشرے کی تعمیر وترقی کی راہ میں حائل رکاوٹیں دور کرنے کے لیے اپنا کردار ادا کرنے لگے ہیں۔

کنگ سعود یونیورسٹی کی فیکلٹی آف میڈیسن کی طالبہ ریناد بنت مساعد الحسین نے محسوس کیا کہ قوت گویائی سے محروم افراد گاڑی کے چلانے کا خواب پورا نہیں ہو پاتا۔ ان کی مشکل کو دور کرنے کے لیے سعودی طالبہ نے گاڑی کے باہر والی آوازوں سے انہیں آگاہ کرنے والا ایک آلہ تیار کیا ہے۔

سعودی طالبہ نے ساؤنڈ سنسر تیار کیا ہے جس کی مدد سے ساؤنڈ ویووز کے ذریعے گاڑی کے باہر والی آوازیں سکرین پر آ جاتی ہیں۔ قوت گویائی سے محروم شخص گاڑی کے سکرین پر نظر آنے والی ویووز کی علامتیں، رنگ اور تصویر کے ذریعے پتا لگا سکتا ہے کہ اسے کس مشکل کا سامنا ہے اور اس سے کس طرح نجات حاصل کر سکتا ہے۔

ہر قسم کی آواز الگ رنگ میں سکرین پر نظر آتی ہے۔ اس سے یہ بھی پتا چل جاتا ہے کہ آواز کس قسم کی ہے اور کتنے فاصلے پر ہے۔ ڈرائیور سب دیکھ کر درپیش صورتحال سے آسانی سے نمٹ سکتا ہے۔ یہ سہولت نہ ہونے کی وجہ سے قوت گویائی سے محروم افراد کے لیے ڈرائیونگ مشکل ہو رہی تھی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں