دو مقدس ترین مساجد کا پیغام پہنچانے کیلئے چینی زبان کی سروس بھی شروع

گزشتہ سال خطبہ عرفہ کا بیک وقت 14 بین الاقوامی زبانوں میں ترجمہ کیا گیا، دنیا بھر سے 200 ملین افراد مستفید ہوئے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مکہ مکرمہ میں بیت اللہ شریف کی مسجد حرام اور مدینہ منورہ میں مسجد نبویﷺ کے امور کی صدارت عامہ نے متعلقہ حکام کے تعاون سے پیغام کی ترجمانی کیلئے چینی زبان کی سروس بھی شروع کر دی۔ صدارت عامہ نے اس سال خطبہ عرفہ کا 14 بین الاقوامی زبانوں میں ترجمہ کرکے پیش کرنے کا اہتمام کیا۔ زیادہ سے زیادہ دنیا تک رسائی کیلئے جن زبانوں کا اضافہ کیا گیا ان میں انگریزی، فرانسیسی، مالائی، اردو، فارسی، روسی، چینی، بنگالی، ترکی، ہاؤسا، ہسپانوی، سواحلی، تامل اور ہندی شامل ہیں۔

14 زبانوں میں خطبہ حج کی پیشکش کا یہ منصوبہ بے مثال کامیابی سے ہم کنار ہوا اور دنیا بھر سے 200 ملین سے زیادہ افراد خطبہ سے مستفید ہوئے۔ تاریخ میں پہلی مرتبہ دو مقدس ترین مساجد کا پیغام چینی زبان میں بھی دنیا تک پہنچایا گیا۔

دو مقدس مساجد کی صدارت عامہ کی جانب سے نہ صرف خطبات اور دروس کا چینی زبان میں ترجمہ کیا جاتا ہے بلکہ زائرین کی رہنمائی اور مشاورت بھی چینی زبان میں کی جاتی ہے۔ جنرل ریزیڈنسی کتابوں کا چینی زبان میں ترجمہ کرنے میں جدید ٹیکنالوجی اور ممتاز اہلیت والے افراد سے استفادہ کرنا چاہتی ہے۔ روبوٹکس اور مصنوعی ذہانت جیسی ٹیکنالوجی کا استعمال کرنے کے بھی منصوبے ہیں۔

سعودی عرب کے ’’ وژن 2030‘‘ کی کامیابی کے طور پر بھی چینی زبان کو فعال کرنا اہم ہے۔ وژن 2030 کا مقصد تعلیمی نظام کو ترقی دینا اور ثقافتوں اور مواصلات کے بانڈز کو جوڑنا ہے۔ صدارت عامہ نے اس حوالے سے متعدد اقدامات شروع کیے ہیں جن میں لائبریری آف دی ہولی میں خواتین کے حصے کی پہل بھی شامل ہے۔ مکہ مکرمہ کی مسجد حرام میں "چینی زبان سیکھنے میں سہولت فراہم کرنے کی کلید" کے عنوان سے ایک تعلیمی ثقافتی اجلاس منعقد کیا جائے گا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں