دنیا کا سب سے الگ تھلگ گھر دیکھیں اور اس میں رہنے کا تصور کریں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسے دنیا کا سب سے الگ تھلگ گھر کہا جاتا ہے اور کچھ لوگ اس میں رہنا چاہتے ہیں۔ کچھ لوگ اس میں رات گزارنا بھی چاہتے ہیں۔ اس کے برخلاف بعض افراد اس گھر میں رہائش کو ایک پریشان کن خواب کے طور پر دیکھتے ہیں۔ خاص طور پر اس صورت میں جب اس گھر کے متعلق عجیب و غریب نظریات پھیلے ہوئے ہیں۔ تو اس گھر کی کہانی کیا ہے؟

یہ چھوٹا سفید گھر آئس لینڈ کے ایک دور دراز جزیرے پر اکیلا موجود ہے۔ اسے دنیا کا سب سے الگ تھلگ گھر کہا جاتا ہے اور اسے دروں بین افراد کے خوابوں کا گھر سمجھا جاتا ہے۔

اس سے قبل شائع ہونے والے برطانوی اخبار "مرر" کی ایک رپورٹ کے مطابق تصاویر میں ایک سبز پہاڑی پر لکڑی کا ایک تنہا مکان دکھایا گیا تھا جو چاروں اطراف سے سمندر میں گھرا ہوا تھا۔ یہ گھر آئس لینڈ کے جنوب میں ایک دور افتادہ جزیرے Ellidaey میں واقع ہے۔ یہ چھوٹا جزیرہ Vestmannaeyjar کا حصہ ہے جو 15 سے 18 جزائر پر مشتمل ایک جزیرہ نما ہے۔

آج یہ جزیرہ ویران ہے لیکن کبھی اس میں پانچ خاندان آباد تھے۔ ان میں سے آخری خاندان 1930 کی دہائی میں یہاں سے منتقل ہوگیا تھا اور تب سے یہ جزیرہ غیر آباد ہے۔

فیس بک سے لی گئی تصویر

دور دراز جزیرے پر واقع اس وائٹ ہاؤس کے بارے میں طویل عرصہ سے مختلف افواہیں، سوالات اور نظریات گردش کر رہے ہیں۔

دی سن کے مطابق ایسی ہی ایک افواہ کا دعویٰ ہے کہ اسے ایک سنکی ارب پتی نے بنایا تھا جس نے اسے بھوت پریت آنے کی صورت میں استعمال کرنے کا منصوبہ بنایا تھا۔

دوسرے بعض افراد نے کہا کہ یہ گھر مشہور آئس لینڈی گلوکار بیورک کا ہے۔ یا یے گھر کسی مذہبی پیروکار سے تعلق رکھتا ہے۔ سوشل میڈیا پر کچھ لوگوں نے تو یہاں تک دعویٰ کردیا کہ اس گھر کا کوئی وجود ہی نہیں اور یہ تصاویر فوٹو شاپ کی گئی ہیں۔

تاہم حقیقت میں یہ گھر ایلی ڈائی جزیرے پر واقع ہے اور ایلی ڈائی ہنٹنگ ایسوسی ایشن کی ملکیت ہے۔ یہ پچھلی صدی کے پچاس کی دہائی میں تعمیر کیا گیا تھا۔ یہ ایسوسی ایشن کے ارکان کے لیے ایک شکاری کیبن کا کام کرتا ہے۔ یہ شکاری یہاں آکر "پفنز" کا شکار رکتے ہیں۔ پفنز ایک ایسا پرندہ ہے جو اکثر شمالی نصف کرہ میں سمندروں کے ساحلوں پر رہتا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں