.

شاہ سلمان کے دورۂ مصر سے اقتصادی تعلقات میں اضافہ ہوگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

سعودی عرب کے فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز مصر کے پانچ روزہ دورے پر قاہرہ میں ہیں۔انھوں نے مصری صدر عبدالفتاح السیسی سے ملاقات کی ہے اور ان سے دوطرفہ تعلقات کے فروغ پر تبادلہ خیال کیا ہے۔جمعرات کو سعودی مصر تجارتی کونسل کا اجلاس ہوا ہے۔

مصر کے وزیر صنعت وتجارت طارق قبیل نے اس اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ دونوں ملکوں کے درمیان تزویراتی تعلقات سے دوطرفہ مفادات کو حقیقت کا روپ دینےمیں مدد ملے گی۔

انھوں نے کہا کہ ''ہم تمام شعبوں میں ہر سطح پر دوطرفہ تعلقات کو بڑھانے کے لیے ایک سازگار ماحول پیدا کرنا چاہتے ہیں۔اس اجلاس کا مقصد سعودی اور مصری کمپنیوں کے درمیان ڈائیلاگ کی حوصلہ افزائی اور تعاون کو وسعت دینا ہے''۔

انھوں نے سعودی سرمایہ کاروں پر زوردیا کہ وہ مصری مارکیٹ میں مزید سرمایہ کاری کریں اور دستیاب مواقع سے فائدہ اٹھائیں۔مصر کی وزیر سرمایہ کاری دالیا خورشید نے اس موقع پر کہا کہ حکومت مصر میں سعودی بزنس کمیونٹی کو درپیش کسی بھی قسم کے مسائل اور رکاوٹوں کو دور کرنا چاہتی ہے۔

انھوں نے کہا کہ سرمایہ کاری کے ماحول کو بہتر بنانا حکومت کی اولین ترجیح ہے اور اس نے سعودی سرمایہ کاروں اور کاروباری شخصیات سے قریبی روابط استوار رکھے ہوئے ہیں۔

اس موقع پر سعودی چیمبرز کی کونسل کے چئیرمین عبدالرحمان الزامل نے کہا کہ سعودی سرمایہ کار مصر کو اپنی دوسری مارکیٹ سمجھتے ہیں۔یہ عرب ،افریقی اور یورپی خطے کی مارکیٹوں میں ایک اہم برآمدی مرکز ہے۔

سعودی مصری مشترکہ کمیٹی کے پندرھویں سیشن کا دو روزہ اجلاس جمعرات کو ختم ہوگیا ہے۔اس اجلاس میں سعودی وفد کی قیادت وزارت صنعت وتجارت کے انڈرسیکریٹری برائے بیرونی تجارت احمد آل حقبانی نے کی۔انھوں نے اپنی تقریر میں کہا کہ شاہ سلمان مصر اور سعودی عرب کے درمیان تمام شعبوں میں دو طرفہ تعلقات کو بڑھانے میں گہری دلچسپی رکھتے ہیں۔