مراکشی وزیراعظم حرم نبوی پر رنجیدہ ہو کر رو پڑے

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

مراکش کے وزیراعظم عبدالالہ بن کیران کا کہنا ہے کہ مدینہ منورہ میں جو کچھ ہوا وہ جنونی پن کا مظہر ہے۔

"العربیہ" نیوز چینل کے ساتھ ٹیلیفونک بات چیت میں بن کیران کا کہنا تھا کہ " میں آپ لوگوں کے ساتھ گفتگو کے حوالے سے ہچکچاہٹ کا شکار تھا کیوں کہ اس جنونی کارروائی کی مذمت کے اظہار کے لیے میرے پاس الفاظ نہیں ہیں"۔

بن کیران نے رمضان المبارک میں حرم نبوی میں مسلمانوں کو نشانہ بنانے کی کوشش پر اپنی شدید حیرانی کا اظہار کرتے ہوئے گلوگیر آواز میں کہا کہ "میں اظہار کی طاقت کھو چکا ہوں"۔

بن کیران مسلمانوں کی جانب سے زمان و مکان کی حرمت کا خیال کیے بغیر کے ایک دوسرے کو قتل کرنے کا ذکر کرتے ہوئے ہوا کے دوش پر گفتگو کے دوران ہی رو پڑے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ " جن لوگوں نے یہ کام کیا ہے وہ اجتماعی جنون کا شکار ہیں۔ وہ عقل ، منطق ، قلب اور روح سے محروم ہو چکے ہیں"۔

بن کیران نے زور دیا کہ امت مسلمہ کو اس جرم ، نادانی ، دہشت گردی ، سرکشی اور بدعنوانی کے سامنے ڈٹ جانا چاہیے جس نے ہر جگہ یہاں تک کہ روئے زمین کے پاک ترین حصے میں بھی بے قصور اور مسلمانوں کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے۔

بن کیران کا کہنا تھا کہ مشرق سے لے کر مغرب تک مسلمانوں کو چاہیے کہ وہ اپنی قیادت کے پیچھے کھڑے ہو جائیں تاکہ شرعی اور قانونی انصرام کے ساتھ ایک امت کے طور پر ، اس دہشت گردی ، جرم اور جنون کا مقابلہ کیا جا سکے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں