لیبیا کی سرکاری فوج کا ملک کے 90 فی صد علاقے پر کنٹرول کا دعویٰ

تُرکی اور قطر پر لیبیا میں دہشت گردوں کی معاونت کا الزام

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لیبیا کی فوج کے سربراہ جنرل خلیفہ حفتر نے دعویٰ کیا ہے کہ سرکاری فوج نے ملک کے 90 فی صد علاقوں میں سے مسلح عسکریت پسندوں کو نکال باہر کرنے کے بعد ان علاقوں پر اپنا کنٹرول مضبوط کرلیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق لیبی فوج کے ترجمان احمد المسماری نے ایک بیان میں کہا کہ درنہ شہرکو دہشت گردوں سے آزاد کرائے جانے کے بعد سرکاری فوج ملک کے نوے فی صد علاقے پر کنٹرول حاصل کرنے میں کامیاب ہوگئی ہے تاہم دارالحکومت طرابلس میں مسلح گروپوں کی حکومت کو ختم کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

احمد المسماری کا کہنا تھا کہ لیبی فوج آخری عسکریت پسند کے خاتمے تک اپنی جنگ جاری رکھے گی اور ملک کے چپے چپے کو دہشت گردوں سے آزاد کرایا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ لیبیا کی فوج بہادری اور جانثاری کے ساتھ لڑ رہی ہے۔ اندرونی اور بیرونی سازشوں اور عالمی برادری کی طرف سے لیبیا کو اسلحہ کی فراہمی پر عاید کردہ پابندیوں کے باوجود ہمارے بہادر سپاہی پورے لیبیا کو تحفظ دینے کی صلاحیت رکھتے ہیں۔

احمد المسماری نے قطر اور ترکی پر لیبیا میں دہشت گرد گروپوں کی معاونت کا الزام عاید کیا اور کہا کہ یہ دونوں ملک لیبیا میں آبادیاتی توازن تبدیل کرنے کے لیے بھاری رقوم صرف کررہے ہیں۔ لیبی فوج کے پاس دہشت گردوں کی معاونت کرنے والےممالک کے خلاف ٹھوس شواہد موجود ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں