.

یمنی فوج نے صعدہ میں حوثی ملیشیا کی بچھائی 500 بارودی سرنگیں تلف کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمنی فوج کی انجنئیرنگ ٹیموں نے عرب اتحاد کی مدد سے شمالی صوبے صعدہ کے ضلع کتاف میں حوثی ملیشیا کی بچھائی گئی 500 بارودی سرنگیں اور دھماکا خیز ڈیوائسز نکال کر تلف کردی ہیں۔

صعدہ میں بارودی سرنگوں کی تلفی کا کام کرنے والی انجنئیرنگ ٹیموں کے ایک ذریعے نے بتایا ہے کہ انھوں نے صعدہ میں حوثی ملیشیا سے آزاد کرائے گئے علاقوں کو بارودی سرنگوں سے پاک کرنے کے لیے کارروائیاں جاری رکھی ہوئی ہیں تاکہ شہری جب اپنے گھروں کو لوٹیں تو انھیں کسی قسم کا کوئی خطر ہ لاحق نہ ہو۔

اس ذریعے کا کہنا تھا کہ حوثیوں نے آبادی والے علاقوں میں سیکڑوں بارودی سرنگیں چھپا رکھی ہیں۔اب تک ان سے بازیاب کرائے گئے علاقوں سے200 بارودی سرنگیں ، بارود سے بھری گاڑیاں اور 300 دھماکا خیز ڈیوائسز نکالی جاچکی ہیں۔ان کا وزن تین سے 80 کلو گرام تک تھا۔

انھوں نے یہ بھی انکشاف کیا ہے کہ حوثیوں نے ان میں سے زیادہ تر بارودی سرنگوں اور بموں کودیہات میں واقع فارموں ، شہری آبادیوں اور عوامی شاہراہوں کے قُرب وجوار میں چھپا رکھا تھا۔واضح رہے کہ دوسری عالمی جنگ کے بعد یمن میں حوثی شیعہ باغیوں نے سب سے زیادہ بارودی سرنگیں بچھائی ہیں ۔

ایران کے حمایت یافتہ حوثیوں نے نہ صرف ان بارودی سرنگوں کو ایک جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کیا ہے جن پر بین الاقوامی سطح پر پابندی عاید ہے بلکہ انھوں نے ان کو کھلی جگہوں اور شہری آبادیوں کے نزدیک بھی بلا تمیز نصب کیا ہے۔ مزید برآں وہ اپنے زیر قبضہ علاقوں کو خالی کرنے سے قبل وہاں بارودی سرنگیں بچھا جاتے ہیں ۔ان کے دھماکوں میں اب تک تین ہزار سے زیادہ یمنی شہری مارے جاچکے ہیں ۔ان میں زیادہ تر خواتین اور بچےتھے۔

انسانی حقوق کی تنظیموں نے خبردار کیا ہے کہ یمن میں بارودی سرنگوں کے د ھماکوں میں شہریوں کی ہلاکتوں میں اضافہ ہوسکتا ہے کیونکہ حوثیوں نے یمن کے مختلف علاقوں میں پانچ لاکھ سے زیادہ بارودی سرنگیں بچھا رکھی ہیں ۔یمن میں بارودی سرنگوں کو تلف کرنے کا کام گذشتہ دو سال سے جاری ہے اور سرکاری سکیورٹی فورسز نے اس عرصے میں حوثی باغیوں سے بازیاب کرائے گئے علاقوں میں تین لاکھ سے زیادہ بارودی سرنگیں ناکارہ بنا دی ہیں ۔