.

اقوام متحدہ کی شہریوں اور زخمیوں کے انخلا کے لیے لیبیا میں فوری جنگ بندی کی اپیل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اقوام متحدہ نے لیبیا کے دارالحکومت طرابلس کے جنوب میں واقع نواحی علاقوں میں اتوار کو دو گھنٹے کے لیے فوری جنگ بندی کی اپیل کی ہے تاکہ وہاں سے زخمیوں اور شہریوں کو نکالا جا سکے۔ طرابلس کے نواح میں جنرل خلیفہ حفتر کی وفادار فورسز مشرقی لیبیا سے چڑھائی کرتے ہوئے آ پہنچی ہیں اور وہ دارالحکومت کی جانب رواں دواں ہیں جبکہ لیبیا کی بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ حکومت کی وفادار فورسز ان کی مزاحمت کررہی ہیں۔

لیبیا میں اقوام متحدہ کے مشن نے’’ ان تمام متحارب مسلح گروپوں سے وادی ربی ، الکیخ ، جسر بن غاشیر اور العزیزیہ میں گرینچ معیاری وقت ( جی ایم ٹی ) 1400 بجے سے 1600 جی ایم ٹی تک دو گھنٹے کے لیے انسانی بنیاد پر جنگ بندی کی اپیل کی ہے تاکہ وہاں سے لیبیا کی انجمن ہلال احمر اور امدادی ٹیمیں زخمیوں اور شہریوں کو نکال سکیں ‘‘۔

دریں اثناء اقوام متحدہ کی حمایت یافتہ حکومت کے تحت وزارت صحت نے ایک بیان میں کہا ہے کہ گذشتہ جمعرات سے خلیفہ حفتر کی قومی فوج (ایل این اے ) کی دارالحکومت کی جانب چڑھائی کے بعد سے 21 افراد ہلاک اور 27 زخمی ہوگئے ہیں۔تاہم اس نے یہ نہیں بتایا ہے کہ ان میں عام شہری کتنے ہیں۔ایل این اے نے ہفتے کے روز لڑائی میں اپنے 14 جنگجوؤں کی ہلاکت کی اطلاع دی تھی۔

امریکا کی افریقی کمان نے طرابلس اور اس کے نواحی علاقوں میں لڑائی چھڑ جانے کے بعد لیبیا میں موجود اپنے فوجیوں کو عارضی طور پر نکال لیا ہے۔

خلیفہ حفتر کی وفادار فورسز نے ہفتے کے روز ایک فضائی حملے کی زد میں آنے کے بعد مغربی لیبیا میں لڑاکا طیاروں کے لیے نوفلائی زون کا ا علان کردیا تھا ۔ ایل این اے نے میڈیا کو جاری کردہ ایک بیان میں کہاکہ ’’ ہم العزیزیہ کے علاقے پر فضائی حملے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہیں۔ حملہ آور طیارے نے مغربی شہر مصراتہ سے اڑان بھری تھی‘‘۔

مصراتہ سے تعلق رکھنے والی فورسز قومی اتحاد کی حکومت کی وفادار ہیں اور ان کی خلیفہ حفتر کے تحت فورسز سے ملک کے مغربی علاقے پر کنٹرول کے لیے لڑائی جاری ہے۔طرابلس میں حکومت نواز فورسز نے حفتر فورسز کو شدید فضائی بمباری میں نشانہ بنانے کی تصدیق کی تھی ۔