رمضان امید ، رواداری اور امن کا مہینہ ہے: امریکی صدر

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے مسلم ا کثریتی ممالک کے واشنگٹن میں متعیّن سفیروں اور سفارتی کور کے ارکان کے اعزاز میں سوموار کی شب افطار عشائیے کا اہتمام کیا۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ ’’ رمضان امید ، رواداری اور امن کا مہینہ ہے‘‘۔

انھوں نے کہا کہ حال ہی میں تمام عقیدوں کے پیروکار ایک مشکل دور سے گزرے ہیں۔ انھوں نے نیوزی لینڈ کے شہر کرائس چرچ میں دومساجد میں مسلمانوں پر حملے ، سری لنکا میں ایسٹر کے موقع پر عیسائیوں پر خودکش بم حملوں اور کیلی فورنیا اور پٹس برگ میں یہود پر حملوں کا حوالہ دیا۔

انھوں نے کہا کہ ان حملوں کی نذر ہونے والوں کی یاد میں ہم دہشت گردی کی لعنت اور مذہب کی بنا پر ناروا سلوک کو شکست دینے کے عزم کا اظہار کرتے ہیں تاکہ تمام لوگ کسی خوف وخطر کے بغیر عبادت کرسکیں اور اپنے دل پسند عقیدے کے ساتھ زندہ رہ سکیں۔

صدر ٹرمپ نے کانگریس کی دو مسلم خواتین ارکان کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا ۔انھوں نے ڈیمو کریٹک پارٹی کے ٹکٹ پر مشی گن سے ایوان نمایندگان کی رکن منتخب ہونے والی رشیدہ طلیب کے بارے میں ایک ٹویٹ میں دعویٰ کیا کہ وہ اسرائیل اور یہود کے بارے میں سخت نفرت رکھتی ہیں۔انھوں نے کہا:’’ کیا آپ یہ تصور کرسکتے ہیں کہ اگر میں وہ سب کچھ کہتا ، جو کچھ انھوں نے کہا ہے کہ تو پھر کیا ہوتا ‘‘۔

رشیدہ طلیب کے بیانات پر صدر ٹرمپ اور ری پبلکن پارٹی کے ارکان نے کافی غوغا آرائی کی ہے اور انھیں یہود مخالفت پر محمول کیا ہے جبکہ ڈیمو کریٹک پارٹی کے ارکان کا کہنا ہے کہ رشیدہ طلیب کے بیانات کا وہ مطلب نہیں ہے جو ری پبلکن ارکان سمجھے ہیں یا بیان کررہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں